کینسر کی مریضہ 15 سالہ لڑکی نے انٹرنیٹ پر اپنی آخری خواہش کا اظہار کردیا، یہ آخری خواہش کیا تھی اور پھر لوگوں نے کیا کیا؟ جان کرآپ کا بھی انسانیت پر اعتبار بحال ہوجائے گا

کینسر کی مریضہ 15 سالہ لڑکی نے انٹرنیٹ پر اپنی آخری خواہش کا اظہار کردیا، یہ ...
کینسر کی مریضہ 15 سالہ لڑکی نے انٹرنیٹ پر اپنی آخری خواہش کا اظہار کردیا، یہ آخری خواہش کیا تھی اور پھر لوگوں نے کیا کیا؟ جان کرآپ کا بھی انسانیت پر اعتبار بحال ہوجائے گا

  

ایمسٹرڈیم(مانیٹرنگ ڈیسک) نیدرلینڈز کی ایک 15سالہ کینسر کی مریض لڑکی نے انٹرنیٹ پر لوگوں سے اپنی آخری خواہش کا اظہار کر دیا، جس کے جواب میں لوگوں نے ایسا کام کر دیا کہ جان کر انسانیت پر اعتبار بحال ہو جائے ۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق سبین وورٹیل بویئر نامی یہ لڑکی گزشتہ سال دماغ کے کینسر کا شکار ہوئی۔ اس کے بھائی نے کراﺅڈ فنڈنگ کے ذریعے اس کے علاج کے لیے رقم جمع کی اور اسے لے کرامریکی شہر ہوسٹن چلا گیا تاہم اس کا مرض خطرناک حد کو پہنچ چکا تھا۔ کچھ عرصہ قبل ڈاکٹروں نے اسے لاعلاج قرار دیا۔

’ماں میں خود کشی کررہی ہوں کیونکہ میرے اپنے ہی شوہر نے مجھے۔۔۔‘ نئی نویلی دلہن نے خود کشی کرلی اور جاتے جاتے اپنی ماں کے نام ویڈیو میں ایسی بات کہہ دی کہ پوری دنیا کو رُلا کر رکھ دیا

سبین نے گزشتہ ہفتے فیس بک پر لوگوں سے آخری خواہش ظاہر کرتے ہوئے لکھا ”ایک ہفتہ قبل میرے ایم آر آئی سکین کی رپورٹ بہت خراب آئی ہے اور میری زندگی بہت کم رہ گئی ہے۔ اس رپورٹ کے بعد میں نے علاج ترک کرنے کا فیصلہ کیا ہے کیونکہ اب اس سے مجھے کوئی فرق نہیں پڑتا۔میری ایک آخری خواہش ہے۔ میں چاہتی ہوں کہ کوئی مجھے ڈھیر سارے کارڈز بھیجے۔ کیا آپ یہ کر سکتے ہیں؟“ پوسٹ میں اس نے اپنے گھر کا پتہ بھی لکھ دیا۔

اس پوسٹ کے چند دن کے اندر اندر ہی 33ہزار کارڈز اس کے گھر پہنچ گئے اور اس کا کمرہ کارڈز سے بھر گیا۔ سبین کو لوگوں نے اتنے کارڈز بھیجے کے نیدرلینڈز کی پوسٹل سروس کو ایک سپیشل ٹیم صرف اس کے کارڈز پہنچانے پر متعین کرنی پڑگئی۔سبین کی والدہ کا کہنا ہے کہ ”مجھے لگتا ہے کہ میری بیٹی کے پاس اب زیادہ وقت نہیں ہے۔ وہ زیادہ تر سوتی رہتی ہے لیکن اب اسے درد نہیں ہوتا۔ سبین نے اتنے سارے کارڈز موصول ہونے کے بعد لکھا ہے کہ ”میرے لیے اتنا کچھ کرنے کا بہت شکریہ۔ میرے خیال میں اب آپ لوگوں کو گڈ بائے کہنے کا وقت آ گیا ہے۔“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -