عیاش تھانیدار نے اپنے دوست ڈانسر کا غریب خاندان کے مکان پر قبضہ کرادیا

عیاش تھانیدار نے اپنے دوست ڈانسر کا غریب خاندان کے مکان پر قبضہ کرادیا
عیاش تھانیدار نے اپنے دوست ڈانسر کا غریب خاندان کے مکان پر قبضہ کرادیا

  

فیصل آباد (ویب ڈیسک) ایس ایچ او نے خوبرو دو شیزاﺅں کی زلفوں میں مدہوش ہر کر غریب خاندان کو گھر سے نکال کر قبضہ گروپ کے حوالے کر دیا ، متاثرہ خاندان کو دھکے دیکر تھانے سے باہر نکال دیا ، متاثرین کو قبضہ گروپ کی طرف سے شدید تشدد کا نشانہ بناتے ہوئے خواتین کے بال کاٹ دیے ۔

یوٹیوب چینل سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

روزنامہ خبریں کے مطابق محمد حسین ، فرخ وقاص اور رخسانہ بی بی نے بتایا کہ سات ماہ قبل ہم نے رضیہ بی بی سے 32 لاکھ روپے میں مکان خریدا جس کے کچھ عرصہ بعد قبضہ گروپ طاہر ، سبحان ، طارق ندیم عمران ، بشریا اور آسیہ وغیرہ نے گھر پر دھاوا بول دیا اور اسلحہ کے زور پر اہل خانہ کو تشدد بناتے ہوئے گھر سے نکال دیا جبکہ خاتوں رخسانہ بی بی کے بال کاٹ دیے جس پر ہم نے تھانہ پیپلز کالونی میں درخواست دی تو پولیس اہلکاروں نے دھکے دیکر تھانے سے باہر نکال دیا اور ہمیں شدید تذلیل کا نشانہ بنیا۔

بعد ازاں ایس ایچ او خالد کلیار خود موقع پر پہنچ گیا اور اپنی معشوق ڈانسر عظمیٰ بی بی کے کہنے پر سامان گھر سے باہر نکلوا کر گلی سے باہر پھینکوا دیا اور کارروائی کرنے کی بجائے ہمیں جان سے مارنے کی دھمکیاں دیں ، متاثر خاندان نے کہا کہ ایس ایچ او خالد کلیار ڈانسر عظمیٰ بی بی کے گھر آکر ساری رات شراب کے ساتھ ساتھ شباب کے نشے سے لطف اندوز ہوتا ہے جبکہ خالد کلیار کی معشوق کی تھانے آمد پر دیگر افسران بھی گیٹ پر آکر اسکا استقبال کرتے ہیں ، انہوں نے مزید کہا کئی بار ہمیں تھانے بلوا کر پولیس اہلکار ہراساں کرتے اور خاموشی اختیار کرنے کی تجویز دی جاتی ہے جبکہ گزشتہ جاردن سے ہم دردر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہیں اور اپنے اہل خانہ سمیت سڑک پہ سونے پر مجبور ہیں۔

متاثرہ خاندان نے چیف جسٹس آف پاکستان ، آرمی چیف ، وزیر اعلیٰ پنجاب ، آرپی او سے مطالبہ کیا ہے کہ جلد از جلد ہمیں مکان واپس دلوایا جائے اور ایس ایچ او خالد کلیار سمیت تمام ذمہ دار ان کے خلاف قانونی کارروائی عمل میں لا کر انصاف فراہم کیا جائے ، اگر مطالبات نہ منظور کیے گئے تو آرپی او آفس کے سامنے بچوں سمیت خود کو آگ لگا کر خودسوزی کر لیں گے۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -فیصل آباد -