کورونا وباء کب تک چلے نہیں معلوم:وزیر اعظم،کم از کم 6ماہ یا ایک سال اسی صورتحال میں رہنا پڑیگا،عمران خان،احساس کیش روزگار پروگرام پورٹل کا افتتاح،فی کس 12ہزار ملیں گے

کورونا وباء کب تک چلے نہیں معلوم:وزیر اعظم،کم از کم 6ماہ یا ایک سال اسی ...

  

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر، نیوز ایجنسیاں)وزیراعظم عمران خان نے کورونا وائرس کے باعث ملازمت سے محروم ہونیوالے افراد کیلئے احساس کیش پروگرام کے دوسرے مرحلے کا آغاز کردیا۔ جس کے تحت ملازمت سے محروم ہونیوالے افراد اندراج کرکے رقم کے حصول کیلئے خود کو رجسٹر کرواسکتے ہیں، ویب سائٹ پر رجسٹرڈ بیروز گار افراد کو 12 ہزار روپے فی کس دیے جائیں گے،جبکہ وزیر اعظم عمران خان نے کہا لاک ڈاؤن کے منفی اثرات معیشت پر اثر اندازہو رہے ہیں، کورونا وائرس کب تک چلے گا نہیں جانتے،کم ازکم چھ ماہ یا ایک سال تک ہمیں اسی صورتحال میں رہنا پڑے گا، میں خود کورونا ریلیف فنڈ کی نگرانی کررہا ہوں، پیسے شفاف طریقے سے تقسیم کیے جائیں گے،اس کا آڈٹ ہوگا اور رقم کی تفصیل بھی عوام کے سامنے لائی جائیگی،اس وقت برصغیر میں سب سے کم پیٹرول کی قیمت پاکستان میں ہے، قیمتوں میں کمی سے عوام کو ریلیف دینے کی کوشش کررہے ہیں،پٹرول کی قیمتو ں کیساتھ تمام اشیاء کی قیمتیں نیچے آنی چاہئیں، انتظامیہ کو ہدایت کر دی ہے قیمتیں نیچے لائی جائیں۔ ہفتہ کو کورونا ریلیف فنڈ کے ویب پورٹل کے آغاز کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے احساس کیش پروگرام کے دوسرے مرحلے کیلئے ویب پورٹل کے آغاز کا بھی اعلان کیا جہاں ملازمت سے محروم ہونے والے افراد اندراج کرکے رقم کے حصول کیلئے خود کو رجسٹر کرواسکتے ہیں۔انہوں نے کہا اب تک 3 ہفتوں میں 68 لاکھ خاندانوں میں 81 ارب روپے سے زائد تقسیم ہوچکے ہیں۔ احساس کیش پروگرا م کی طرح بیروزگاروں کو بھی رقم دیں گے، متاثرہ افراد کو تفصیل دینی ہوگی کہ وہ کہاں کام کرتے تھے۔ جن لوگوں کو ویب سائٹ پر اندراج میں مشکل ہو وہ کسی کی مدد لیں، ٹائیگر فورس لوگوں کے ویب سائٹ پر اندراج میں مدد کرے۔انہوں نے وزیراعظم کورونا ریلیف فنڈ میں عطیات دینے والے افراد کا شکریہ اداکرتے ہوئے کہا اس فنڈ میں دیے جانیوالے عطیات میں 4 گنا عطیات حکومت خود شامل کریگی تاکہ ان فنڈز کو زیادہ سے زیادہ افراد تک پہنچایا جاسکے۔وزیراعظم نے کہا کہ ہم تعمیراتی صنعت کو پوری طرح کھول رہے ہیں اور انہیں مراعات بھی دے رہے ہیں۔ نیویارک سب سے زیادہ متاثر ہوا تاہم وہاں بھی صنعتیں کھولی جارہی ہیں جتنی زیادہ صنعتیں کھلی گیں اتنا زیادہ روزگار ملے گا۔ وزیر اعظم نے کہا لاک ڈاؤن کے منفی اثرات اتنے زیادہ ہیں کہ امیر سے امیر حکومت بھی اسے برداشت نہیں کر سکتی۔ لاک ڈاؤن کے باعث بیروزگار افراد کی مشکلات سے آگاہ ہیں، بیروزگار افراد کی مالی امداد کی جائیگی،وزیراعظم نے کہاکہ جن کے کورونا وائرس ٹیسٹ پازیٹو آئے ہیں ان کو اپنے گھروں میں قرنطینہ کرنا چاہیے، شہری گھروں سے باہرنکلتے ہوئے احتیاط کریں،عوام احتیاطی تدابیرپرعمل کریں۔عمران خان نے کہا ٹائیگرفورس ہریونین کونسل میں ڈیسک بنائے،ٹائیگرفورس ہریونین کونسل میں تفصیلات اکٹھی کریں گے۔ کوشش ہے مستحقین کوزیادہ سے زیادہ ریلیف فراہم کریں، بیروزگارافراد کیلئے پروگرام سیاست سے بالاترہوگا۔ ان حالات میں ٹیکس کلیکشن نیچے چلی گئی ہے، ہم نے اپنی صنعتوں کوچلانے کیلئے ان کی مددکرنی ہے،حکومت رقم صرف میرٹ کے مطابق دیگی۔قبل ازیں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی پر وزیراعظم نے اہم اقدام اٹھاتے ہوئے صوبوں کو مہنگائی میں کمی لانے کیلئے ہنگامی اقدامات کی ہدایت کی، وزیر اعظم کا کہنا تھا قیمتوں میں کمی کا ثمر عام افراد تک پہنچایا جائے،ہر صورت قیمتیں کم کروائی جائیں۔صوبائی حکومتیں ضلعی انتظامیہ کے تعاون سے ناجائز منافع خوری کیخلاف سخت ترین ایکشن لیں۔

وزیراعظم

اسلام آباد، کراچی،لاہور، پشاور، کوئٹہ، مظفرآباد، گلگت بلتستان (سٹاف رپورٹرز، نیوز ایجنسیاں) پاکستان میں کورونا وائرس کے کیسز دن بدن بڑھتے جارہے ہیں اور اب تقریباً یومیہ ہی ہزار یا اس سے زائد کیسز رپورٹ ہورہے ہیں جبکہ اموات کی شرح بھی بڑھ رہی ہے۔ہفتہ کے روز ملک میں کورونا سے 27اموات ہوئیں جس سے مجموعی طور پر اموات کی تعداد435 ہوگئی،گزشتہ ر وز 1297نئے مصدقہ مریض سامنے آنے سے مریضوں کی مجموعی تعداد 19022 تک جا پہنچی۔دوسری جانب ملک میں صحتیاب مریضوں کی تعداد بھی تیزی سے بڑھ رہی ہے۔مریضوں کا اس تیزی سے صحتیاب ہونا دیگر متاثرین کیلئے ایک امید کی کرن کے طور پر دیکھا جارہا ہے۔سرکاری اعداد و شمار کے مطابق 24 گھنٹوں کے دوران ملک میں 402 مزید مریض صحتیاب ہوگئے۔ان افراد کے شفایاب ہونے کیساتھ ہی ملک میں مجموعی طور پر صحتیاب افراد کی تعداد 4351 سے بڑھ کر 4753 تک پہنچ گئی۔تفصیلات کے مطابق دو مئی بروز ہفتہ سندھ میں کورونا وائرس کے مزید 427 کیسز اور 4 اموات سامنے آئیں۔سندھ حکومت کے ترجمان مرتضیٰ وہاب نے بتایا کہ صوبے میں گزشتہ 24 گھنٹوں میں 3259 ٹیسٹ کیے گئے جس میں 427 مثبت آئے۔ نئے کیسز کے بعد متاثرین کی مجموعی تعداد 7102 تک پہنچ گئی جبکہ انہوں نے 24 گھنٹوں میں مزید 4 اموات کی تصدیق کی جس سے یہ تعداد 122 ہوگئی۔ادھر پنجاب میں کورونا وائرس کے مزید 514 کیسز اور 9 اموات ہوئیں۔ترجمان پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر کی جانب سے بتایا گیا کہ صوبے میں ان نئے کیسز کے بعد مجموعی متاثرین کی تعداد 6854 ہوگئی ہے۔ساتھ ہی انہوں نے صوبے میں مزید 9 اموات کی تصدیق کی اور بتایا کہ اب تک مجموعی اموات 115 تک پہنچ چکی ہیں۔وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں کورونا وائرس کے مزید 22 کیسز کی تصدیق کردی گئی۔سرکاری سطح پر اعداد و شمار بتانیوالی ویب سائٹ کے مطابق اسلام آباد میں مریضوں کی تعداد 343 سے بڑھ کر 365 ہوگئی ہے۔خیال رہے کہ وفاقی دارالحکومت میں کورونا وائرس کے کیسز میں اضافے کا سلسلہ جاری ہے اور اسی کو دیکھتے ہوئے ضلعی انتظامیہ نے سیکٹر آئی-10 کے دو رہائشی علاقوں کو سیل کررکھا ہے۔گزشتہ روزوزیر صحت خیبر پختونخوا تیمور خان جھگڑا نے ٹوئٹ کے ذریعے کورونا کے 108 نئے کیسز کی تصدیق کی جس کے بعد صوبے میں متاثرہ افراد کی تعداد 2907 ہوگئی۔انہوں نے مزید 11 مریضوں کے جاں بحق ہونے کی بھی تصدیق کی جس کے بعد خیبر پختونخوا میں اموات کی تعداد 172 تک جاپہنچی ہے۔جاں بحق مریضوں میں سے 9 کی پشاور جبکہ نوشہرہ اور سوات میں ایک، ایک موت واقع ہو ئیں۔ ہفتہ کے روزترجمان بلوچستا ن حکومت لیاقت شاہوانی نے کورونا کے مزید 36 کیسزاور 3اموات کی تصدیق کی جس کے بعد صوبے میں متاثرین کی تعداد 1172جبکہ اموات کی مجموعی تعداد19 ہوگئی۔ان کا کہنا تھا مقامی سطح پر وائرس منتقلی کے کیسز کی تعداد 1021 ہوگئی ہے۔گلگت بلتستان میں ہفتے کو کورونا کے 16 کیس رپورٹ ہوئے جس کے بعد کورونا مریضوں کی مجموعی تعداد مجموعی تعداد 356 تک پہنچ گئی ہے۔محکمہ صحت کے مطابق اب تک 260 افراد صحت یاب ہو چکے ہیں اور کورونا وائرس سے 3 افراد کا انتقال ہوا ہے۔آزاد کشمیر میں کورونا وائرس کا کوئی کیس رپورٹ نہیں ہوا،علاقے میں کورونا کے کیسز کی تعداد 66 ہے اور 23 افراد صحت یاب ہوچکے ہیں،جبکہ اب تک کوئی ہلاکت نہیں ہوئی ہے۔اگر ملک کی مجموعی صورتحال کو دیکھیں تو پنجاب اور سندھ کے کیسز ایک دوسرے کے قریب ہیں جبکہ خیبرپختونخوا اموات میں سب سے آگے ہے۔اس وقت سندھ میں کیسز کی تعداد 7102 جبکہ پنجاب میں 6854 ہے جبکہ خیبرپختونخوا میں 2907 لوگ متاثر ہوچکے ہیں۔بلوچستان میں اس وقت ایک ہزار 172 لوگ متاثر ہیں جبکہ اسلام آباد میں یہ تعداد 365 ہوچکی ہے۔گلگت بلتستان کی بات کریں تو وہاں 340 لوگ وائرس کا شکار ہوئے ہیں جبکہ آزاد کشمیر میں سب سے کم 66 لوگوں کو کورونا وبا نے متاثر کیا ہے۔

پاکستان کورونا

نیویارک، لندن، برسلز،نئی دہلی،میڈرڈ،ماسکو،ریاض، تہران (مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) دنیا بھر میں کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد 34 لاکھ62 ہزار 190 ہو چکی ہے جبکہ اس سے ہلاکتیں 2 لاکھ 44 ہزار 604 ہو گئیں۔کورونا وائرس کے دنیا بھر میں 20 لاکھ 80 ہزار 947 مریض اب بھی ہسپتالوں میں زیرِ علاج ہیں، جن میں سے 51 ہزار 956 کی حالت تشویشناک جبکہ 10 لاکھ 81 ہزار 639 مریض صحت یاب ہو چکے ہیں۔امریکی میڈیا کی رپورٹ امریکہ کورونا وائرس سے سب سے زیادہ متاثرہ ملک ہے جہاں ناصرف کورونا مریض بلکہ اس سے ہلاکتیں بھی تاحال دنیا کے تمام ممالک میں سب سے زیادہ ہیں۔ مہلک وائرس نے امریکہ کو جکڑ رکھا ہے مزید ایک ہزار946افراد کورونا وائرس سے ہلاک ہو گئے جس کے تعداد65ہزار776ہو چکی ہے،دوسری جانب کیلی فورنیا میں لاک ڈاؤ ن کھولنے کیلئے لوگوں نے احتجاج کیا، نیو یارک کے گورنر نے کہا ریاست کے تما م سکول باقی تعلیمی سال کیلئے بند رہیں گے،امریکی ٹی وی کے مطابق 24گھنٹے میں 36 ہزار نئے کیسز رپورٹ ہوئے جبکہ متاثرہ افراد کی تعداد11 لاکھ 32 ہزار تک پہنچ گئی ہے، ایک لاکھ 61 ہزار سے زائد مریض صحت یاب بھی ہو چکے ہیں۔امریکہ میں کورونا وائرس سے اب تک 65 ہزار 776 افراد موت کے منہ میں پہنچ چکے ہیں جبکہ اس سے بیمار ہونیوا لوں کی مجموعی تعداد 11 لاکھ 31 ہزار 452 ہو چکی ہے،ہسپتالوں میں 9 لاکھ 4 ہزار 113 مریض زیرِ علاج ہیں جن میں سے 16 ہزار 481 کی حالت تشویشناک ہے،یورپ میں اب متاثرہ افراد کی تعداد 15 لاکھ سے تجاوز کر گئی ہے جس کے بعد صورتحال مزید سنجیدگی کی طرف جانے کا خطرہ ہے۔اس حوالے سے جان ہاپکنز یونیورسٹی کی رپورٹ کے مطابق اسپین، اٹلی، برطانیہ، فرانس اور جرمنی اس بیماری کے پھیلاو کی شرح میں یورپ میں سب سے زیادہ متاثر ہیں، ہر ملک میں متاثرہ افراد کی تعداد 1 لاکھ 50 ہزار سے زیادہ ہے۔ موجود صورتحال کی وجہ سے بہت سے ممالک کی معیشت بری طرح متاثر ہو گئی ہے۔ کچھ یورپی ممالک نے جاری لاک ڈاون کو ختم کر کے کاروباری سرگرمیاں شروع کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ فرانس کی حکومت نے حفاظتی اقدامات کی پیروی کرتے ہوئے 11 مئی کے بعد لاک ڈاون ختم کرنے کا فیصلہ کیا۔ برطانیہ میں کورونا وائرس نے مزید 739 افراد کی جان لے لی جس کے بعد تعداد 27ہزار510 ہو گئی ہے۔سپین میں مزید 281، اٹلی میں 269، فرانس میں 218 افراد کورونا سے ہلاک ہو ئے، برازیل 509، بیلجئم 109، روس 96، ترکی میں 84 افراد جان کی بازی ہارگئے۔نیدرلینڈ زمیں کورونا نے مزید 98، سویڈن میں 67، ایران میں 63 افراد کی زندگی نگل لی ہے۔ادھربھارتی وزارت داخلہ کی جانب سے جاری اعلامیے میں کورونا کی غیر معمولی صورتحال کو وجہ بتاکر لاک ڈاؤن میں 18 مئی تک توسیع کا اعلان کیا گیا ہے۔بھارتی وزارت صحت کے مطابق ملک میں گزشتہ روز ایک ہی دن میں کورونا کے 2293 نئے کیسز سامنے آئے جس کے بعد کیسز کی تعداد 37 ہزار 336 ہوگئی جبکہ 1218 افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔بھارت میں کورونا کے باعث نافذ لاک ڈاؤن دنیا کا طویل ترین لاک ڈاؤن جس کے باعث ملک بھر میں سکول، فضائی آپریشن، ٹرین سروس، عبادت گاہیں اور ہوٹلز لاک ڈاؤن تک بند رکھنے کا اعلان کیا گیا ہے۔سپین میں کورونا کے اب تک 2 لاکھ 42 ہزار 988 مصدقہ متاثرین سامنے آئے ہیں جبکہ اس وباء سے اموات 24 ہزار 824 ہو چکی ہیں۔اٹلی میں کورونا وائرس کی وباء سے مجموعی ا مو ا ت 28 ہزار 236 ہو چکی ہیں، جہاں اس وائرس کے اب تک کل کیسز 2 لاکھ 7 ہزار 428 رپورٹ ہوئے ہیں۔برطانیہ میں کورونا سے اموات کی تعداد 27 ہزار 510 ہوگئی جبکہ کورونا کے کیسز کی تعداد 1 لاکھ 77 ہزار 454 ہو گئی۔فرانس میں کورونا وائرس کے باعث مجموعی ہلاکتیں 24 ہزار 594 ہوگئیں جبکہ کورونا کیسز 1 لاکھ 67 ہزار 346 ہو گئے۔جرمنی میں کورونا سے کْل اموات کی تعداد 6 ہزار 736 ہو گئی جبکہ کورونا کے کیسز 1 لاکھ 64 ہزار 77 ہو گئے۔ترکی میں کورونا وائرس سے جاں بحق ہونیوالوں کی تعداد 3ہزار 258 ہو گئی جبکہ کورونا کے کل کیسز 1 لاکھ 22 ہزار 392 ہو گئے۔کورنا وائرس سے روس میں کل اموات 1 ہزار 169 ہو گئیں جبکہ اس کے مریضوں کی تعداد 3 لاکھ 14 ہزار 431 ہو چکی ہے۔ایران میں کورونا وائرس سے مرنیوالوں کی کل تعداد 6 ہزار 91 ہو گئی جبکہ کورونا کے کل کیسز 95 ہزار 646 ہو گئے۔چین جہاں دنیا میں کورونا کا پہلا کیس سامنے آیا تھا وہاں اس وائرس سے اب تک کل ہلاکتیں 4 ہزار 633 ہو گئی ہیں جبکہ کْل کورونا کیسز 82 ہزار 875 ہو گئے۔سعودی عرب میں کورونا وائرس سے اب تک کل اموات 169 رپورٹ ہوئی ہیں جبکہ اس کے مریضوں کی تعداد 24 ہزار 97 تک جا پہنچی ہے۔

دنیا کورونا

مزید :

صفحہ اول -