فوجی اخراجات میں ا مریکہ سرفہرست،چین دوسرے،بھارت تیسرے نمبر پر

فوجی اخراجات میں ا مریکہ سرفہرست،چین دوسرے،بھارت تیسرے نمبر پر

  

اسٹاک ہوم(آن لائن)دنیا بھر میں فوج اور دفاعی معاملات پر ہونیوالے اخراجات سے متعلق ایک تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ گزشتہ ایک دہائی کے دوران 2019 میں عالمی سطح پر ریکارڈ فوجی اخراجات کیے گئے جن میں چین اور بھارت بھی پہلی مرتبہ شامل ہوگئے ہیں۔سویڈن کے اسٹاک ہوم انٹرنیشنل پیس ریسرچ انسٹی ٹیوٹ (ایس آئی پی آر آئی)سے جار ی ایک رپورٹ کے مطابق دنیا بھر کے ممالک نے 2019 میں ریکارڈ 1.9 کھرب ڈالر فوجی اخراجات کیے،رپورٹ کے مطابق امریکہ اور چین کے بعد بھارت دنیا کا تیسرا ملک بن گیا ہے جس نے گزشتہ سال سب سے زیادہ فوجی اخراجات کیے۔دنیا بھر میں ہونیوالے ان اخراجات کا 2018 سے موازنہ کیا جائے تو سالانہ 3.6 فیصد کا اضافہ ہوا ہے جو 2010 سے سب سے زیادہ اخراجات ہیں،ایس آئی پی آر آئی کے محقق نین ٹیان کا کہنا تھا 2008 کی عالمی کساد بازاری کے بعد سے اب تک ہونیوالے یہ سب سے زیادہ اخراجات ہیں۔اگرممالک کی انفرادی بات کی جائے تو امریکہ اس فہرست میں پہلے نمبر پر ہے، جس نے 2019 میں اکیلے 732 ارب ڈالر خرچ کیے جو 5.3 فیصد اضافہ ہے۔گزشتہ برس پوری دنیا کے فوجی اخراجات میں امریکہ کا حصہ 38 فیصد رہا اور 7 سال کمی کے بعد مسلسل دوسرے برس بھی اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔تحقیق کے مطابق دنیا میں سب سے زیادہ فوجی اخراجات کی فہرست میں پہلی مرتبہ دو ایشیائی ممالک بھی شامل ہوئے جو چین اور بھارت ہیں۔چین اور بھارت نے 2019 میں بالترتیب 261 ارب ڈالر اور 71.1 ارب ڈالر خرچ کیا جو 5.1 فیصد اور 6.8 فیصد اضافہ ہے نین ٹیان کا کہنا تھا چین کھلم کھلا یہ کہہ چکا ہے کہ وہ ملٹری سپرپاور کے طور پر امریکہ کا مقابلہ کرنا چاہتا ہے۔چین کے اخرا جا ت کو گزشتہ 25 سال سے دیکھا جائے تو معاشی ترقی کے مطابق بڑھے ہیں اور یہ چین کے ”ورلڈ کلاس ملٹری“کے ارادوں کو بھی ظاہر کرتا ہے۔ایس آئی پی آر آئی کے ایک اور محقق سیمن ویزمین کا کہنا تھا بھارت کے اخراجات پاکستان اور چین دونوں حریف ممالک کیساتھ کشیدگی کے باعث بڑھ گئے ہیں۔ایشیا کے دیگر ممالک میں جاپان نے 47.6 ارب ڈالر اور جنوبی کوریا نے 43.9 ارب ڈالر کے فوجی اخراجات کیے،جو ماضی کے برعکس بہت زیادہ ہیں، رپورٹ کے مطابق ایشیا میں 1989 سے فوجی اخراجات میں مسلسل اضافہ ہورہا ہے۔دنیا میں سب سے زیادہ فوجی اخراجات میں روس اور سعودی عرب کا نام بھی شامل ہے،اور دونوں کے مجموعی اخراجات 60 فیصد سے زائد ہیں۔ایس آئی پی آر آئی کے مطابق جرمنی نے 2019 میں حیرت انگیز طور پر 10 فیصد اضافی اخراجات کیے، جو 49.3 ارب ڈالر بنتے ہیں اورو سرفہرست 15 ممالک میں سب سے زیادہ شرح ہے.۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ جرمنی کے فوجی اخراجات میں اضافہ روس کے خطرے میں اضافہ بھی ہوسکتا ہے۔نین ٹیان کا کہنا تھا کہ حالیہ برسوں میں فوجی اخراجات میں بے پناہ اضافہ ہوا ہے، اور یہ رجحان کورونا وائرس کی وبا اور اس کے معاشی اثرات کی وجہ سے تبدیل ہوسکتا ہے۔ دنیا کساد بازادی کی طرف بڑھ رہی ہے، ایسے میں حکومتوں کو فوجی اخرا جا ت کے بجائے تعلیم اور صحت کے شعبوں میں اخراجات بڑھانے ہوں گے۔نین ٹیان نے کہا کہ توقع ہے کہ اس سے فوجی اخراجات میں اثر پڑے گا۔انہوں نے ماضی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ 2008 کے معاشی بحران کے بعد فوجی اخراجات میں کمی آگئی تھی، خاص کر یورپ میں کمی آئی تھی اور کم اخراجات کے اقدامات کیے گئے تھے۔نین ٹیان کا کہنا تھا کہ ہم ایک سے تین برس تک ان اخراجات میں کمی دیکھ سکتے ہیں، اور اس کے بعد اگلے برسوں میں دوبارہ بڑھ جائے گا۔

فوجی اخراجات

مزید :

علاقائی -