بجلی و گیس کی قیمتیں بھی کم کی جائیں:اسلام آباد چیمبر

بجلی و گیس کی قیمتیں بھی کم کی جائیں:اسلام آباد چیمبر

  

اسلام آباد (کامرس ڈیسک) اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر محمد احمد وحید نے کہا کہ حکومت نے موجودہ مشکل حالات میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 15سے 38فیصد کمی کر کے ایک اچھا فیصلہ کیا ہے جس کا تاجر برادری خیر مقدم کرتی ہے کیونکہ اس سے کاروبار کی لاگت میں کچھ کمی واقع ہو گی اور عوام کو بھی بہتر ریلیف ملے گا تاہم انہوں نے مطالبہ کیا کہ حکومت پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کے تناسب سے بجلی و گیس کی قیمتوں میں بھی کمی کا اعلان کرے جس سے ملک میں کاروباری کی لاگت کافی کم ہو گی، مہنگائی کے ہاتھوں ستائے ہوئے عوام کی مشکلات بھی کم ہوں گی اور کاروباری سرگرمیوں کو بہتر فروغ ملنے سے معیشت بحالی کی طرف گامزن ہو گی۔ محمد احمد وحید نے کہا کہ مہنگی بجلی کی وجہ سے پاکستان میں کاروبار کی لاگت میں کئی گنا اضافہ ہوا ہے جس سے ہماری برآمدات کیلئے بھی عالمی مارکیٹ میں مقابلہ کرنا مشکل ہو گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان زیادہ تر بجلی تیل سے چلنے والے پاور پلانٹس سے پیدا کرتا ہے لیکن اس وقت عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمت بہت گر گئی ہے لہذا حکومت کیلئے یہ ایک بہترین موقع کہ وہ بجلی کی قیمت میں نمایاں کمی کرے جس سے پیداواری لاگت نیچے آئے گی، صنعتی و تجارتی سرگرمیوں میں اضافہ ہو گا اور مہنگائی میں کمی ہونے سے مشکلات کا شکار عوام کو بہتر ریلیف ملے گا۔ آئی سی سی آئی کے صدر نے کہا کہ حکومت نے ایک طرف پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کی ہے لیکن دوسری طرف ان مصنوعات پر عائد ٹیکسوں میں کافی اضافہ کر دیا ہے لہذا حکومت ٹیکسوں میں اضافے پر نظرثانی کرے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے پیٹرول پر 5.68روپے فی لیٹر، ہائی سپیڈ ڈیزل پر 6.79 فی لیٹر اور مٹی کے تیل پر14.06روپے فی لیٹر ٹیکس میں اضافہ کر دیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس سے پہلے حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات پر جی ایس ٹی کو بھی بڑھا کر 17فیصد کر دیا تھا جبکہ پیٹرولیم لیوی پچھلے سال پیٹرول پر 10روپے فی لیٹر تھی اس کو بڑھا کر 23.76روپے کر دیا گیا ہے۔ اسی طرح ہائی سپیڈ ڈیزل پر پیٹرولیم لیوی کو پچھلے سال 8روپے فی لیٹر سے بڑھا کر اب 30روپے فی لیٹر اور مٹی کے تیل پرپچھلے سال 6روپے فی لیٹر سے بڑھا کر اب 18روپے فی لیٹر کر دیا گیا ہے لہذا ضرورت اس بات کی ہے کہ موجودہ مشکل حالات کے پیش نظر حکومت پیٹرولیم مصنوعات پر ٹیکسوں اور پیٹرولیم لیوی میں اضافے پر دوبارہ نظرثانی کر کے کاروباری طبقے اور عوام کو مزید ریلیف فراہم کرے جس سے معیشت کا پہیہ بہتر چلے گا اور عوام کی مشکلات کم ہوں گی۔

مزید :

کامرس -