کوروناوائرس نے برطانیہ میں ایک اور پاکستانی ڈاکٹر کی جان لے لی

کوروناوائرس نے برطانیہ میں ایک اور پاکستانی ڈاکٹر کی جان لے لی
کوروناوائرس نے برطانیہ میں ایک اور پاکستانی ڈاکٹر کی جان لے لی

  

لندن(ڈیلی پاکستان آن لائن)برطانیہ میں کورونا وائرس نےفرنٹ لائن پر کام کرنےوالے ایک اورپاکستانی ڈاکٹرکی جان لے لی۔ڈاکٹر فرقان علی صدیق چھ ماہ پہلےپاکستان سے انگلینڈمزیدٹریننگ کے لئے آئے تھے۔

تفصیلات کے مطابق برطانیہ میں کورونا وائرس کے خلاف فرنٹ لائن پرلڑنے والے  ایک اورپاکستانی  ڈاکٹر موذی مرض کا شکار ہوکر جاں بحق ہوگئے۔54 سالہ ڈاکٹر فرقان علی صدیقی نے1991 میں ڈاو میڈیکل کالج  کراچی سے ایم بی بی ایس کیا تھا جس کے بعد وہ اعلیٰ تعلیم کیلئے انگلینڈ چلے گئے تھے۔

انگلینڈ میں اعلی تعلیم حاصل کرنے کے بعد وہ واپس پاکستان چلے گئے تھے تا کہ اپنے والدین اور ملک کی خدمت کر سکیں۔۔چھ ماہ پہلے وہ واپس انگلینڈ مزید ٹریننگ کی غرض سےآئے تھے لیکن بدقسمتی سے وہ بھی کوواڈ وائرس کا شکار ہو گئے اور فرنٹ لائن پر لڑتے ہوئے جان کی بازی ہارگئے ۔

 خیال رہے برطانیہ  دنیا میں سب سے زیادہ متاثرہونے والے ممالک میں شامل ہے جہاں اب تک  ایک لاکھ بیاسی ہزار افراد اس موذی مرض میں مبتلا ہوچکے ہیں جبکہ 28ہزار 131افراد اس وائرس کا شکار ہوکر لقمہ اجل بن چکے ہیں۔ جاں بحق ہونے والوں میں سیکڑوں پاکستانی شہری بھی شامل ہیں۔

 خیال رہے ڈاکٹر فرقان سے قبل پاکستانی نژاد ڈاکٹر میمونہ رانا بھی کووڈ انیس کا شکار ہو کر دارفانی سے کوچ کرچکی ہیں۔

ڈاکٹرمیمونہ اور ان کے شوہر ڈاکٹر قریشی نے آٹھ اپریل کو کوروناوائرس کی علامات ظاہر ہونے پرٹیسٹ کرائے تھے جو دوروز بعد مثبت نکلے۔ ڈاکٹر میمونہ کی حالت بگڑ گئی اور وہ  تیس اپریل کو خالق حقیقی سے جاملیں۔

مزید :

برطانیہ -کورونا وائرس -