حکومت کی پالیسیاں کورونا سے زیادہ خطرناک ہیں، سراج الحق

حکومت کی پالیسیاں کورونا سے زیادہ خطرناک ہیں، سراج الحق
حکومت کی پالیسیاں کورونا سے زیادہ خطرناک ہیں، سراج الحق

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) امیرجماعت اسلامی سراج الحق نے کہا ہے کہ وزیر اعظم نمائشی اقدامات اور دوروں کی بجائے عوام سے کیے گئے وعدے پورے کریں۔ موجودہ حکومت کی پالیسیاں ملکی سالمیت کے لیے تشویشناک اور کورونا سے زیادہ خطرناک ہیں۔ کشمیر کے حوالے سے کسی سودے بازی اور قومی موقف سے انحراف ناقابل  قبول ہوگا۔ قوم کشمیر پر حکمرانوں کی طرف سے صدی کے سب سے بڑے یوٹرن کو ناکام بنادے گی۔ حکومت یورپی پارلیمنٹ کی قرارداد کو  فوری طور پر مسترد کرے۔ نبی اکرم ﷺ کی شان میں گستاخی کرنے والے کو قانون کے مطابق سزا پرعمل درآمد کو جلد یقینی بنایاجا ئے۔ پاکستان اسلام کے نام پر وجود میں آیا جس میں اقلیتیوں سمیت ہر طبقہ کوبنیادی حقوق حاصل ہیں۔  وقف املاک قانون پر تمام مکاتب کو فکر سخت تحفظات ہیں جلد مشاورت کے بعد حکمت عملی ترتیب دیں گے۔  ان خیالات کا اظہار انہوں نے منصورہ میں مرکزی نظم کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

اجلاس میں سیکرٹری جنرل امیرالعظیم، شیخ القرآن والحدیث مولانا عبدالمالک، پروفیسر محمد ابراہیم، ڈاکٹرفرید احمد پراچہ، اظہر اقبال حسن، حافظ ساجد انور، میاں مقصود احمد، نذیراحمدجنجوعہ اور مرکزی ترجمان قیصر شریف  شریک تھے۔

اجلاس تقریبا تین گھنٹے جاری رہا جس میں کشمیرکے حوالے سے حکومتی پالیسی، یورپی یونین کی طرف سے قرارداد، وقف املاک کے قانون اور نصاب میں تبدیلی کے ایشو کا تفصیلی جائزہ لیا گیا اور آئندہ کی حکمت عملی کے حوالے  سے غور کیا گیا۔ 

 امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے۔ کشمیر کے حوالے سے قومی موقف پر کسی قسم کی پسپائی کی اجازت نہیں دیں گے۔ مدینہ کی ریاست بنانے کے دعوے دار نہ جانے کس طرف چل پڑے۔ یکساں نصاب تعلیم کی آڑ میں مغرب کے ایجنڈے پر عمل درآمد کسی صورت قبول نہیں کریں گے۔ پنجاب اور خیبرپختونخوا میں جس نصاب کو نافذ کرنے کا اعلان کیا گیا ہے اگر وہ اسلامی تعلیمات کے مطابق نہ ہوا تو پھرپور مذمت کے ذریعے اسے واپس لینے پر مجبور کردیں گے۔ نصاب تعلیم کی تیاری میں نظریاتی ذہن رکھنے والے ماہرین تعلیم اور علما کو شامل کیا جائے۔ این جی اوز کےکہنے پر اقلیت کو خوش کرنے کے لیے اکثریت کا گلا گھوٹنا نہ جمہوریت ہے اور نہ دانشمندی۔ لوگ اپنے بچوں کو سیرت النبی ﷺ اور اسلامی تعلیمات سے روشناس کروانا چاہتے ہیں۔ سپریم کورٹ سے اپیل کرتے ہیں کہ نصاب تعلیم سے متعلق فیصلے میں اسلامیان پاکستان کی اکثریت کے جذبات کا خیال رکھا جائے۔ 

 سراج الحق نے کہا کہ ضرورت اس امر کی تھی کہ ہماری حکومت فوری طور یورپی یونین کی قرار داد کو مسترد کرتے ہوئے اس کو اپنے ملک میں مداخلت قرار دیتی لیکن تاحال اس حوالے سے خاموشی نظر آتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ جلد وقف املاک قانون، نصاب تعلیم میں تبدیلی کے حوالے سے اپنی آئندہ کی حکمت عملی کا اعلان کریں گے۔

سراج الحق نے کہا کہ حکومت تاحال عوام سے کیے گئے وعدوں میں سے کوئی ایک وعدہ پورا کرنے سے بھی قاصر نظر آتی ہے۔ فوری طورپر مہنگائی میں عوام کو ریلیف دیا جائے۔ نوجوانوں کے لیے روزگار کا اہتمام کیا جائے اور کورونا کے حوالے سے ٹھوس بنیادوں پر اقدامات اٹھائے جائیں تاکہ عوام کو کچھ ریلیف ملے۔عوام آج بھی سخت حالات کے باوجود رمضان المبارک کی بابرکت گھڑیوں میں حکومت کی طرف سے مثبت اقدامات کا انتظارکر رہے ہیں۔

مزید :

قومی -علاقائی -پنجاب -لاہور -