ای ووٹنگ، صدارتی آرڈیننس لاسکتے ہیں: فواد چوہدری، مسلم لیگ ن، پیپلز پارٹی جے یو آئی نے الیکٹرانک ووٹنگ کی مخالفت کردی 

      ای ووٹنگ، صدارتی آرڈیننس لاسکتے ہیں: فواد چوہدری، مسلم لیگ ن، پیپلز ...

  

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) وفاقی وزیر برائے اطلاعات و نشریات فواد چوہدری نے انتخابات میں الیکٹرانک ووٹنگ کیلئے صدارتی آرڈیننس لانے کا عندیہ دے دیا۔جیو نیوز کے پروگرام نیا پاکستان میں گفتگو کرتے ہوئے فواد چوہدری کا کہنا تھاکہ الیکٹرانک ووٹنگ مشین انٹرنیٹ پر نہیں ہے تو ہیک ہونے کے امکانات نہیں، الیکٹرانک ووٹنگ مشین جس ملک میں انٹرنیٹ سے کنیکٹ تھی وہاں مسائل آئے۔وزیراطلاعات کا کہنا تھاکہ الیکشن کمیشن کا کمیٹی میں زبردست کام ہے، الیکشن کمیشن نے سخت شرائط لگائیں تھیں جو انجینیئرز نے پوری کیں جبکہ الیکٹرانک ووٹنگ مشین کو مرحلہ وار چیک کیا جاسکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ حکومت انتخابات میں الیکٹرانک ووٹنگ کیلئے صدارتی آرڈیننس لا سکتی ہے،۔ فواد چوہدری نے کہا فنانینشل ایکشن ٹاسک فورس (فیٹف) کے معاملے پر اپوزیشن نے بارگین کرنے کی کوشش کی، فیٹف معاملے پر حکومت پر اگر پابندیاں لگ جاتیں تو معاشی بحران پیدا ہوسکتا تھا۔ فواد چوہدری نے کہا کہ غلط رویہ اپوزیشن کا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ن لیگ اگر الیکشن اصلاحات پر بات چیت کرنے کو تیار نہیں تو ان کا رویہ سب کے سامنے ہے۔فوادچوہدری نے کہا کہ سیاسی جماعتوں کو اپنے اپنے اسٹرکچر ٹھیک کرنے ہوں گے، زبردستی کوئی کسی جماعت میں نہیں آتا، کوئی دباؤ نہیں ہوتا۔۔فوادچوہدری نے کہا کہ ن لیگ کا اپنا مطالبہ تھا کہ سینیٹ الیکشن اوپن بیلٹ سے ہونے چاہییں، عمران خان نے سینیٹ الیکشن اوپن بیلٹ کا کہا تو انہوں نے مخالفت کی۔ وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات فواد چوہدری  نے کہا  ہے کہ  مسلم لیگ (ن)  کا انتخابی اصلاحات پر مذاکرات سے فرار انتہائی افسوس ناک ہے۔ اتوار کو سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پانے بیان میں   فواد چوہدری  نے کہا    (ن) لیگ کا انتخابی اصلاحات پر مذاکرات سے فرار انتہائی افسوس ناک ہے، یہ کہنا کہ اصلاحات کا عمل پارلیمان کی بجائے الیکشن کمیشن نے کرنا ہے، ظاہر کرتا ہے کہ انھیں نظام کی سمجھ ہے نہ ہی اصلاحات سے کوئی دلچسپی۔ ہمیشہ سازش سے برسراقتدار آنے ولی جماعت کیوں اصلاحات کی بات کرے گی؟۔دریں اثناوزیر مملکت برائے اطلاعات و نشریات فرخ حبیب  نے کہا ہے کہ شہباز شریف کوئی ایسا سسٹم بتادیں کہ جس سے دھاندلی کو روکا جاسکے شہباز شریف کے دل میں چور نظر آرہا ہے جو ای ووٹنگ کی مخالفت کررہے ہیں  پی ڈی ایم سارا بی پئیر مال ہے وہ اپنے آپ کو دفن کرچکی ہے کورونا وباء نے پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے رکھا ہے حکومت کورونا وباء سے نمٹنے کیلئے اقدامات کررہی ہے  فیصل آباد میں میڈ یا سے گفتگو کر تے ہو ئے انہوں نے کہاکہ کبھی ن لیگ کہتی ہے ریٹرنگ افسران غائب ہوگئے تو کبھی ڈبے غائب ہوگئے امریکہ میں جب صدر ٹرمپ نے دھاندلی کی بات کی تو ای ووٹنگ سے انصاف ہواپی ڈی ایم اب خود ایک دوسرے کی مخالفت کررہی ہیں پی ڈی ایم میں شامل جماعتوں کا مستقبل میں کوئی وجود نہیں اپوزیشن  ہر الیکشن میں ایک دوسرے پر دھاندلی کا الزام لگاتے ہیں ن لیگ اور پیپلز پارٹی سمیت اپوزیشن ای ووٹنگ سے کیوں بھاگتے ہیں وزیر اعظم پر بے بنیاد الزامات لگا دیتے ہیں وہ لوگ جو ای ووٹنگ سے بھاگتے ہیں وہ دھاندلی زدہ نظام کا حصہ ہیں بشیر ممین سامنے آکر بتائیں کہ انہیں کون ورغلا رہا ہے ایسا شخص جو خود مشکوک ہو وہ وزیراعظم پر الزامات لگائے۔ ایسے فرد کے خلاف کاروائی عمل میں لائی جائیانہوں نے کہا کہ  شہر میں مزید 5ویکسی نیشن سینٹر شروع کئے جارہے ہیں یومیہ 20 ہزار ویکسی نیشن کرنے کا اضافہ ہوگا پنجاب حکومت کی ویکسی نیشن مہم بہترین  طریقہ سے جاری ہے  کورونا کی وباء آنے پر صرف 400 یومیہ ٹیسٹ کرنے کی صلاحیت تھی اب یومیہ ہزاروں ٹیسٹ کئے جارہے ہیں کورونا کرائسز میں ہم نے بہت کچھ سیکھا بھی ہے۔

فواد چوہدری

 لاہور(نمائندہ خصوصی،مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)  پاکستان مسلم لیگ(ن)کے صدر اور قائد حزب اختلاف شہبازشریف نے الیکڑانک ووٹنگ مشین کے استعمال کی تجویز مسترد کر تے ہوئے  کہا ہے کہ  انتخابی اصلاحات کا حساس کام پوری قوم کی منشا اور اعتماد سے ہوتا ہے، دنیا نے الیکڑانک ووٹنگ کا نظام مسترد کیا، پاکستانی الیکشن کمیشن بھی اسے ناقابل عمل قرار دے چکا ہے، الیکڑانک ووٹنگ کے بجائے تباہ وبرباد معیشت، آسمان سے باتیں کرتی مہنگائی،بے روزگاری اورمرتی عوام کی فکر کریں عوام کی امنگوں اور اعتماد کا مظہر و محور پارلیمان ہے جسے 3 سال سے تالا لگایا ہوا ہے مسلم لیگ (ن) نے 2018 میں پی ٹی آئی سمیت تمام سیاسی جماعتوں کی مشاورت سے تاریخی انتخابی اصلاحات کی تھیں، ہمارے دور میں ہونے والی ان اصلاحات پر کسی کو اعتراض نہیں تھا، سب کے اتفاق رائے کا مظہراور دستخط شدہ انتخابی اصلاحات کی وہ تاریخی دستاویز آج بھی موجود ہے، جس وقت اپوزیشن مثبت تجاویز اور میثاق معیشت کی بات کررہی تھی تو این آر او، این آر او کا شور وغل مچاکر ان کی توہین کی گئی۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے ممبر صوبائی اسمبلی چودھری غلام رضا ربیرہ ایڈووکیٹ اور بلال اکبر خان سے ملاقات کے دوران کیا انہوں نے میاں شہباز شریف کو رہائی پر مبارکباد پیش کی اس موقع پر میاں شہباز شریف نے مسلم لیگ ن کے ساتھ بے مثال وابستگی اورشاندار خدمات پر رائے چودھری غلام رضا ربیرہ ایڈووکیٹ کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ مسلم لیگ ن کو ان جیسے ر ہنماؤں پر فخر ہے،میاں شہباز شریف نے کہا کہ دنیا نے الیکڑانک ووٹنگ کا نظام مسترد کیا، پاکستانی الیکشن کمیشن بھی اسے ناقابل عمل قرار دے چکا ہے، الیکڑانک ووٹنگ کے بجائے تباہ وبرباد معیشت، آسمان سے باتیں کرتی مہنگائی،بے روزگاری اورمرتی عوام کی فکر کریں،رمضان میں مہنگائی کو کنٹرول کرنے کے بجائے غریب عوام پر کبھی بجلی اور کبھی تیل کی قیمتوں میں اضافے کی شکل میں ڈرون حملے جاری ہیں نااہل حکمرانوں کی وجہ سے پاکستان کے عوام بھوک،بدحالی اور بدامنی کی آگ میں جل رہے ہیں، حکومت عوام کو ریلیف دینے میں ناکام ہو چکی نالائقوں کے ٹولے نے عوام کی زندگیاں مشکلات سے دو چار کر دی ہیں دریں اثناپاکستان مسلم لیگ ن کے صدر میاں شہباز شریف سے سینیٹر شاہین خالد بٹ، ایم پی اے بشریٰ انجم بٹ، مسلم لیگ ن کے ٹریڈر ونگ کے سرپرست اعلیٰ انجم محمود بٹ،  شاہ رخ بٹ، خالد محمود بٹ نے ملاقات کی۔ اس موقع پر شہباز شریف کو جیل سے رہائی پر خصوصی مبارکباد دی گئی اور اس کے علاوہ ملکی و قومی مسائل پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔پاکستان  ڈیموکریٹ موومنٹ  کے قائم مقام ترجمان حافظ حمد اللہ نے  وزیر اعظم عمران خان کی جانب سے انتخابی اصلاحات پر تعاون کو مسترد کردیا ہے۔اتوار کے روز  ایک بیان میں حافظ حمد اللہ نے کہا کہ  انتخابی اصلاحات کی بات وہ عمران خان کرتے ھے جن کی حکومت دھاندلی کی گندی ڈھیر پر کھڑی ھے،  عمران خان کو دھاندلی کی گندی بدبودار ڈھیر پر چوکیدار بناکر بٹھایاگیا ہے،پہلے ملک اور قوم کو اس چوکیدار اور دھاندلی کی گندی ڈھیر سے نجات دلانا ضروری ھے، چاروں صوبوں کے ضمنی الیکشن میں عوام نے پی ٹی ائی کوشکست کی صورت میں سنادیا،  عمران خان اصلاحات کے لیکچر ہمیں اور قوم کو بیوقوف بناکر  دے رہے ہیں،انہوں نے کہا کہ  آپکی حکومت،چینی، آٹا، دوائی۔اور مختلف قسم کے چوروں کا مجموعہ  ہے  جس وزیر کے خلاف کرپشن کاالزام اتاہے،صرف وزارت تبدیل کی جاتی  ہے،کیاگندے کپڑوں کو ایک دوسرے کے ساتھ تبدیل کرنے سے انقلاب اور تبدیلی آتی ھے؟خان صاحب کیا آپ نے کبھی بھی کسی قومی ایشو پر اپوزیشن کو سنجیدگی سے دعوت دی  ہے،خان صاحب آپکی حکومت نے ملک کو سیاسی معاشی طور پر تباہ کیا،لاقانونیت مہنگائی اور بے روزگاری کیوجہ سے عوام کی چیخیں نکل  رہی ہیں،نا اہل وزیراعظم صاحب اپ نے اور  آپ کی جماعت نے سپریم کورٹ اور الیکشن کمیشن پر حملے کئے،آپ نے وعدہ تبدیلی اور نئے پاکستان کا کیاتھا اب ہر طرف تباہی ہی تباہی  ہے، ہر ادارے کی اصلاح  آپ کی  حکومت کے خاتمے میں ہے،جو کہ پی ڈی ایم کا اولین مقصد  ہے۔دوسری طرف  پیپلز پارٹی کے رہنما  نیر حسین بخاری اور فرحت اللہ بابر نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں آئے روزسکیورٹی کے نام پر انٹرنیٹ کے ساتھ چھیڑخانی ہوتی رہتی ہے۔ یہاں الیکٹرانک ووٹنگ زیادہ خطرناک ہوگی جن ممالک نے اس کوشروع کیا تھا انہوں نے بھی چھوڑ دیا ہے اس لئے الیکٹرانک ووٹنگ کا نظام درست نہیں 

شہباز شریف

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) وزیراعظم عمران خان نے ہدایت کی ہے کہ آئندہ  بجٹ میں ضروریات کو مدنظر رکھتے ہوئے ترقیاتی منصوبے تشکیل دیے جائیں اور مہنگائی کی شرح کو روکنے پر بھی خصوصی توجہ دی جائے۔ وزیراعظم کے زیر صدارت آئندہ بجٹ اور ملکی معیشت کے حوالے سے اعلیٰ سطح کا اجلاس  ہوا۔ اجلاس میں سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر، وفاقی وزرا شاہ محمود قریشی، پرویز خٹک، شفقت محمود، اسد عمر، فواد چودھری، گورنر خیبر پختونخوا شاہ فرمان، وزیرِاعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان، صوبائی وزرا ہاشم جواں بخت، تیمور سلیم جھگڑا اور متعلقہ اعلیٰ حکام نے شرکت کی۔ اجلاس میں آئندہ بجٹ کے حوالے سے پارٹی کی سینئر قیادت سے تجاویز طلب کی گئیں۔اجلاس میں ملکی معیشت، مہنگائی کو روکنے کیلئے حکمت عملی اور آئندہ مالی سال میں ترقیاتی منصوبوں پر تفصیلی گفتگو ہوئی۔اجلاس کو بتایا گیا کہ آئندہ مالی سال کا بجٹ ترقیاتی بجٹ ہوگا جس میں تمام تر توجہ شرح نمو میں اضافے پر ہوگی۔ آئندہ مالی سال میں ترقیاتی کاموں کو مزید تیز تر کرکے نئے منصوبوں کا آغاز کیا جائے گا جس سے معاشی سرگرمیوں میں اضافہ ہوگا، روزگار کے بے شمار مواقع پیدا ہونگے جی ڈی پی کا حجم بڑھے گا اور محصولات میں اضافہ ہوگا۔اجلاس کو بتایا گیا کہ کورونا کی وجہ سے دنیا بھر کی معیشت متاثر ہوئی ہے تاہم حکومت کی جامع پالیسیوں کی بدولت ملکی معیشت کا پہیہ رواں ہے۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ کورونا وباء  کے باوجود حالیہ سمارٹ لاک ڈاؤن سے پہلے محصولات کی شرح پچھلے سال اپریل سے تقریباً دْوگْنا ریکارڈ کی گئی۔وزیراعظم کو مہنگائی کو روکنے کیلئے بنائی گئی جامع حکمتِ عملی سے بھی آگاہ کیا گیا۔ وزیرِ اعظم نے اس موقع پر ہدایت دی کہ آئندہ بجٹ میں ترقیاتی منصوبوں پر خصوصی توجہ دی جائے۔انہوں نے کہا کہ جاری منصوبوں کی تکمیل کو یقینی بنانے کے ساتھ ساتھ عوام کی ضروریات کو مدنظر رکھتے ہوئے ترقیاتی منصوبوں کو حتمی شکل دی جائے۔ وزیر اعظم نے ہدایت کی کہ ترقیاتی منصوبوں کے ساتھ ساتھ مہنگائی کی شرح کو روکنے پر بھی خصوصی توجہ دی جائے۔دریں اثنا وزیراعظم عمران خان نے بغیر  پروٹوکول کے اسلام آباد کے مختلف علاقوں کا دورہ کیا وزیراعظم عمران خان اپنی گاڑی خود چلا رہے تھے، وزیراعظم کے ہمراہ چیئرمین سی ڈی اے عامر احمد علی بھی موجود تھے، وزیراعظم کے ساتھ وزیراعظم آفس کے عملے کا کوئی اہلکار نہیں تھا۔ وزیراعظم نے ارجنٹائن پارک، ٹریل فائیو، مرغزار اور مارگلہ روڈ کا دورہ کیا اور شجرکاری مہم میں لگائے گئے پودوں کو بھی چیک کیا۔ وزیراعظم نے اسلام آباد میں مرمت کی گئی سڑکوں کا معائنہ بھی کیا جبکہ وزیراعظم کو چیئرمین سی ڈی اے نے ترقیاتی کاموں پر بریفنگ دی۔وزیر اعظا نے احساس ریڑی بان پروجیکٹ، رمضان سستا بازار اور دیگر پروجیکٹ کا جائزہ لیا اور عوام سے گفتگو کرتے ہوئے ان کے تاثرات بھی سنے،۔وزیر اعظم نے جی 11 مرکز کا دورہ بھی کیا اور دکانداروں سے گفتگو کی۔ انہوں نے انہیں ہدایت کی کہ وہ ایس او پیز پر عمل کریں۔وزیر اعظم جی الیون  مرکز میں ریڑھی بانوں کے پاس بھی گئے اور ان کو کورونا ایس او پیز پر عملدرآمدکی ہدایت کی،۔دریں اثنا وزیر اعظم عمران خان سے  وزیر اعظم کے مشیر بابر اعوان نے وزیر اعظم سے ورچوئل ملاقات کی اور وزیر اعظم کو انتخابی اصلاحات سے متعلق بین الوزارتی کمیٹی کی  رپورٹسے متعلق آگاہ کیا  اس موقع پر وزیر اعظم نے کہا کہ انتخابابی عمل پر قوم کا اعتماد کرنا ضروری ہے۔انتخابی دھانلی کسی ایک جماعت کا مسئلہ نہیں۔ پاکستان کا مستقبل جمہوریت سے وابستہ ہے،اور شفاف انتخابات جمہوریت کی بنیاد ہیں انتخابی اصلاحات کیلئے  بڑے پیمانے پر مشاورت  کا آغاز کیا جائے

عمران خان

مزید :

صفحہ اول -