توانائی کے شعبہ میں مزید ترقی کیلئے سخت محنت کرنا ہو گی : وزیر اعظم

توانائی کے شعبہ میں مزید ترقی کیلئے سخت محنت کرنا ہو گی : وزیر اعظم

اسلام آباد (آن لائن)وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ ملک بھر میں صنعتی شعبے کو گیس اور بجلی فراہم کی جارہی ہے،ہمیں سخت محنت سے توانائی کے شعبے میں مزید ترقی کرنی ہے،توانائی کے شعبے میں ہم نے وہ کام کیے جو کسی اور نے نہیں کئے،پاکستان کھاد درآمدی ملک سے برآمدی ملک بن گیا ہے،گیس کو ہماری توانائی کی ضرورت پورا کرنے میں کلیدی حیثیت حاصل ہے، تاپی گیس منصوبہ عملدرآمد کے مراحل میں ہے، ایران ،پاکستان گیس پائپ لائن منصوبہ عالمی پابندیوں کے باعث التوا کا شکا ر ہے، فرنس آئل سے بجلی پیدا کرنے کے پلانٹس کو گیس پر منتقل کیا جارہا ہے۔ پاکستان تیل وگیس کانفرنس سے گزشتہ روز خطاب کرتے ہوئے شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ توانائی کے شعبے میں کئی چیلنجز کا سامنا ہے۔چیلنجز سے نمٹنے کیلئے مثبت تجاویز کی ضرورت ہے۔این ای ڈی یونیورسٹی اور پٹرولیم انسٹیٹیوٹ کی اس حوالے سے کوشش قابل قابل ستائش ہیں،2013میں حکومت سنبھالی تو بجلی اور گیس کے بحران کاسامنا تھا، توانائی ماہرین کی طرف سے مسئلے کے حل کے کیلئے مناسب تجاویز نہیں دی جارہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کا کام کاروبارنہیں ہم نے پالیسی سازی میں تعاون کرنا ہے۔انھوں نے کہا کہ 3ایل این جی ٹرمینل تکمیل کے مراحل میں ہیں۔ایس ایس جی مقامی گیس سے زیادہ درآمدی گیس فراہم کرے گی۔انہوں نے کہا کہ ڈیزل سے مہنگی بجلی پیداکرنے والے پلانٹس کو بندکردیا جبکہ فرانس آئل سے چلنے والے پلانٹ کم کارکردگی کے حامل اور آلودگی پیداکرتے ہیں لہٰذا موثر فیول مکس کیلئے ماہرین تجاویز دیں ۔فرانس آئل سے بجلی پیدا کرنے کے پلانٹس کو گیس پر منتقل کیا جارہا ہے تھراور درآمدی کوئلے سے بجلی پیداکرنے کے منصوبوں پر توجہ دے رہے ہیں۔

وزیراعظم

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے مختلف سیاسی جماعتوں کے پارلیمانی سربراہان سے ملاقات کی، ملاقات میں ملک کی موجودہ سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا۔تفصیلات کے مطابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے مختلف پارلیمانی رہنماؤں سے ملاقات کی، وزیراعظم سے ملاقات کرنے والوں میں محمود خان اچکزئی، مولانا عبدالغفور حیدری، غوث بخش مہر، میر حاصل خان بزنجو، سینیٹر پروفیسر ساجد میر اور محمد اعجاز الحق شامل تھے۔ قبل ازیں وزیراعظم نے پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں کے ایک اجلاس کی بھی صدارت کی جس میں قومی اہمیت کے امور پر بات چیت کی گئی۔ اجلاس میں چوہدری نثار علی خان، خواجہ محمد آصف، احسن اقبال اور خواجہ سعد رفیق شریک تھے۔دریں اثناء وزیراعظم ہاؤس میں ٹیکس اصلاحات کے بارے میں اعلیٰ سطحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے ٹیکس بنیاد کو وسعت دینے کیلئے موثر اقدامات اٹھانے کی ضرورت کو اجاگر کرتے ہوئے فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کو ہدایت کی ہے کہ تمام فریقین کی مشاورت سے منظم اور وسیع البنیاد اصلاحات متعارف کرائی جائیں اورہر کسی کو ٹیکس ادا کرنے اور اپنا قومی فریضہ ادا کرنے کی طرف راغب کیا جائے۔ اجلاس میں وزیراعظم کے معاون خصوصی ہارون اختر خان، وزیراعظم کے معاون خصوصی مفتاح اسماعیل، ٹیکس اصلاحات کمیشن کے ارکان اور سینئر حکام نے شرکت کی۔ وزیراعظم کو اشد درکار ٹیکس اصلاحات متعارف کرانے، ٹیکس بنیاد کو وسعت دینے، ٹیکس وصولی کے نظام کو آسان بنانے اور آڈیٹنگ سسٹم میں معیاری بہتری لانے کے بارے میں اٹھائے جانے والے مختلف اقدامات کے بارے میں بریفنگ دی گئی۔ محصولات کی وصولی کے نظام کو زیادہ مستعد اور دوستانہ بنانے کیلئے مختلف تجاویز پر بھی تفصیلی غوروغوض کیا گیا۔ ملک کے ٹیکس دہندگان کی سہولت کیلئے ایف بی آر کی طرف سے اٹھائے جانے والے اقدامات پر بھی غوروغوض ہوا۔ وزیراعظم نے ہدایت کی کہ نادرا، بینکوں، صوبائی حکام اور یوٹیلٹی خدمات کرنے والے متعلقہ اداروں کے ساتھ ایف بی آر کا فوری رابطہ استوار ہونے کا عمل تیز ہونا چاہئے تاکہ سسٹم کو زیادہ مستعد بنایا جا سکے۔

شاہد خاقان عباسی

مزید : صفحہ اول