الپوری‘ شانگلہ میں کھلی کچہری کا انعقاد‘ مسائل کے انبار

الپوری‘ شانگلہ میں کھلی کچہری کا انعقاد‘ مسائل کے انبار

الپوری(رپورٹ/آفتاب حسین)شانگلہ میں طویل عرصہ کے بعد انتظامیہ کی کھلی کچہری ، عوام نے مسائل کے انبار لگا دئے،ضلع بھر مسائل کے دلدل میں نظر آتا ہے ، ترقیاتی فلاحی فنڈز مخصوص ٹولے کو دئے جاتے ہیں، اس دور میں بھی ضلع شانگلہ سکولوں ، ہسپتالوں ، سڑکوں کو سہولیات اورپینے کے صاف پانی کا شدید فقدان ہے ، انتظامیہ کے افسران دفاتر میں نہیں ہوتے ، عوام کا کوئی پرسان حال نہیں، ایسی کھلی کچہریاں صرف حکومتی پالیسی پورے کرنے ہیں ۔ الپوری میں جمعرات کو منعقدہ کھلی کچہری میں عوام ضلعی انتظامیہ اور سرکاری محکموں پر برس پڑے ۔سب سے زیادہ مسائل میں عوام نے محکمہ سی اینڈ ڈبلیو ۔محکمہ جنگلات ۔محکمہ صحت ۔محکمہ تعلیم ۔سرحد رورل سپورٹ پروگرام ۔ سی ڈی ایل ڈی پر شدید انگلیاں اٹھاتے ہوئے تنقید کی۔ کھلی کچہری میں تحریک انصاف کے مرکزی ڈپٹی سیکرٹری اطلاعات شوکت یوسف زئی ۔ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر شانگلہ راحت اللہ خان ۔ ڈپٹی کمشنر شانگلہ عبد الحمید ۔ تحصیل میونسپل آفیسر محمد افضل خان ۔ اسسٹنٹ کمشنر الپوری طارق محمود سمیت ضلعی انتظامیہ و ضلعی محکموں کے سربراہان موجود تھے۔ کھلی کچہری میں ضلع بھر سے ائے ہوئے عوام نے مسائل کے انبار لگا دتے ہوئے کہا کہ اس وقت صوبائی حکومت دعویٰ کر رہے ہیں کہ انھوں نے صوبہ میں اصلاحات لائے ہیں تا ہم شانگلہ میں صوبائی حکومت کے اصلاحات نظر نہیں آرہے ، دور دراز علاقوں میں اس دور جدید میں بھی بنیادی سہولیات کا فقدان ہے ، ضلعی انتظامیہ شانگلہ ایسی کھلی کچہری کرکے صرف جان چھڑاتے ہیں ، کوئی بھی عملی اقدامات نظر نہیں آرہے ، شانگلہ کے سینکڑوں سکولز ، ہسپتال ، سڑکیں ویران پڑے ہیں، 2005کے زلزلہ ،2010کے سیلاب ،2015کے سیلاب اور زلزلے نے شانگلہ کا ترقیاتی نقشہ تبدیل کرکے رکھ دیا ہے ، اس ضلع کو ترقی کی راہ پر گامزن کرنے کیلئے عملی اقدامات اٹھانے کی اشد ضرورت ہے ، محض جھوٹے وعدوں اور تسلیوں پر ترقی نہیں ہوسکتی، شانگلہ کی پسماندگی دور کرنے کیلئے انتظامیہ کو خلوص نیت سے کام کرنا ہوگا۔ان خیالات کا اظہار کھلی کچہری میں مختلف علاقوں سے آنے والے افراد نے کیا۔کھلی کچہری سے خطاب کرتے ہوئے پی ٹی ائی کے رکن صوبائی اسمبلی و مرکزی ڈپٹی سیکرٹری اطلاعات شوکت علی یوسف زئی نے الپوری کالج میں واٹر سپلائی سکیم کیلئے دس لاکھ روپے فنڈ دینے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ شانگلہ کی پسماندگی دور کرنے کیلئے صوبائی حکومت شانگلہ میں ترقیاتی منصوبوں پر خصوصی توجہ دے رہی ہے ۔ڈپٹی کمشنر شانگلہ عبد الحمید نے کھلی کچہری سے خطاب کرتے ہوئے تمام محکموں کو فوری طور پر ہدایات دیتے ہوئے کہا کہ عوامی مسائل کو ترجیحی بنیادوں پر حل کرنا انتظامیہ کی ذمہ داری ہے ، تمام محکمے اپس میں تعاؤن بڑھا ئیں تو مسائل پر قابو پایا جاسکتا ہے۔ تحصیل ناظم الپوری نے خوڑوں اور ندی نالوں میں کچرہ پھینکنے کے حوالے سے حکام کو ہدایات کرتے ہوئے کہا کہ ٹریڈ یونین کیساتھ مل کر پابندی لگائی جائے کہ ہوٹل سمیت کوئی بھی گندگی دریاؤں میں نہ پھینکے اس کیلئے میونسپل انتظامات کئے گئے ہیں ۔ کھلی کچہری سے تحصیل میونسپل آفسر محمد افضل خان نے کہا کہ میونسپل سروسز کا کام جاری ہے جس کسی کو بھی شکایت ہو اس کا فوری طور پر ازالہ کیا جائیگا، سولر لائٹس کو ٹھیک کرنے کیلئے جلد اقدامات اٹھائیں جائیں گے ، ہیڈ کوارٹر بازار میں عوام کے لئے لیٹریزجلد تعمیر کی جائیگی، الپوری جامع مسجد میں سولر سسٹم میونسپل ایڈمنسٹریشن لگائیگی ، سول کالونی الپوری میں پانی کی قلت پر نوٹس لیتے ہوئے ان کیلئے پانچ لاکھ روپے دینے کا اعلان کیا جس پر فوری طور پر کام شروع کیا جائیگا۔ سپیڈ بریکروں کے حوالے سے سوالات کے جوابات دیتے ہوئے حکام کا کہنا تھا کہ یہ کام اب نیشنل ہائی وے کے پاس ہے تا ہم ایف ایچ اے کے ساتھ تمام سڑکوں پر سپیڈ بریکرز لگائے جائیں گے ، لوکل کوٹھے کے حوالے سے عوام نے سخت بے چھینی کا اظہار کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ شانگلہ میں اب سردیوں کا موسم ہے ۔لہٰذا بندوبست کیا جائے جس پر ڈی ایف او نے اپنی مکمل تعاون کی یقین دہانی کرادی۔ کھلی کچہری میں بلدیاتی نمائندوں سمیت زندگی کے مختلف شعبہ فکر سے تعلق رکھنے والے افراد نے کثیر تعداد میں شرکت کی اور باری باری اپنے علاقوں کے مسائل تفصیل سے بیان کیے۔

 

مزید : پشاورصفحہ آخر