ہائی کورٹ نے حکومت پنجاب کو ایس پی رینک کی 18 نشستیں ٹریفک وارڈنز کے لئے مختص کرنے کا حکم دے دیا

ہائی کورٹ نے حکومت پنجاب کو ایس پی رینک کی 18 نشستیں ٹریفک وارڈنز کے لئے مختص ...
ہائی کورٹ نے حکومت پنجاب کو ایس پی رینک کی 18 نشستیں ٹریفک وارڈنز کے لئے مختص کرنے کا حکم دے دیا

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائیکورٹ نے ٹریفک سارجنٹ برانچ کے ڈی ایس پیز کو ایس پی کے عہدے پر ترقی نہ دینے کے خلاف درخواست پر حکومت پنجاب کو ایس پی رینک کی 18 نشستیں ٹریفک وارڈنز کے لئے مختص کرنے کا حکم دے دیاہے.

وینزوویلا کے صدر خطاب کے دوران پیٹِس کے مزے اڑاتے رہے

عدالت نے ایس پی رینک کی نشتسوں کے لیے 18 سیٹوں پر حکم امتناعی بھی جاری کر دیاہے۔مسٹر جسٹس ساجد محمود سیٹھی نے ڈی ایس پی ٹریفک ملک داﺅد کی درخواست پر سماعت کی، کیس کی سماعت کے دوران لیگل ایڈوائزر وزیراعلی پنجاب ملک احمد خان اورسابق ایس پی سی آئی اے عمر ورک بھی پیش ہوئے، درخواست گزار کی طرف سے موقف اختیار کیا گیا کہ ڈی ایس پیز ٹریفک کو عرصہ دراز سے ایس پی کے عہدوں پر ترقی نہیں دی جا رہی ہے جبکہ درخواست گزار کے رینک کے دیگر افسران کو اگلے عہدے پر ترقی دی جاچکی ہے لیکن ٹریفک پولیس میں ہونے کی وجہ سے درخواست گزار کے کیڈر کے افسران کو ترقی نہیں دی جارہی ہے، جو امتیازی سلوک ہے انہوں نے استدعا کی کہ عدالت ٹریفک سارجنٹ برانچ کے ڈی ایس پیز کو ایس پی کے عہدوں پر ترقی کا حکم دے، سرکاری وکیل نے عدالت کو بتایا کہ صوبائی کوٹے سے ترقی پانے والا ایس پی پاکستان سروس پولیس کا حصہ بن جاتا ہے، عدالت نے کیس پر مزید سماعت ملتوی کرتے ہوئے جواب طلب کر لیاہے۔

مزید : لاہور