بر طانیہ میں حسن نواز کیخلاف منی لانڈرنگ کیس سے متعلق شواہد نہیں ملے : واجد ضیاء

بر طانیہ میں حسن نواز کیخلاف منی لانڈرنگ کیس سے متعلق شواہد نہیں ملے : واجد ...

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر ) احتساب عدالت نے نیب کی طرف سے نواز شریف کے خلاف دائر کردہ ضمنی ریفرنس فلیگ شپ کے تفتیشی افسر کو پیر کے روز طلب کر لیا،میاں نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث نے عدالت کو بتایا واجد ضیا پر پیر تک جرح مکمل کر لوں گا،عدالت نے نواز شریف کی ایک روز کیلئے حاضری سے استثنیٰ کی درخواست منظور کرتے ہوئے فلیگ شپ انوسٹمنٹ ریفرنس کی سماعت پیر تک ملتوی کردی سابق وزیر اعظم نواز شریف جمعہ کو بھی عدالت پیش نہ ہو سکے ،جبکہ عدالت نے نواز شریف کی حاضری سے استثنیٰ کی درخواست منظور کرلی۔ دوران جرح واجد ضیا نے بتایا کہ جے آئی ٹی نے ایسی کوئی دستاویز حاصل نہیں کی جس سے ظاہر ہو کہ کسی یوکے اتھارٹی نے حسن نواز کو فنا نشل سٹیٹمنٹ یا کمپنیاں بنانے سے متعلق شوکاز نوٹس جاری کیاہو،یا حسن نواز کے خلاف منی لانڈرنگ کا کیس چل رہا ہوجبکہ واجد ضیا کا کہنا تھا کہ تفتیش کے دوران معلوم ہوا کہ حسن نواز 2001 سے یوکے میں رہائش پذیر تھے۔یہ درست ہے کہ حسن نواز نے بتایا کہ انہوں نے فلیگ شپ انوسٹمنٹ اور دیگر بارہ کمپنیاں بنائیں۔اور حسن نواز نے جے آئی ٹی کو آگاہ کیا کہ سپریم کورٹ کی پانامہ لیک سے متعلق سماعتوں کے وقت لندن میں تھے۔جرح کے دوران واجد ضیا کا مزید کہنا تھا کہ حسن نواز نے بتایا کہ کوئنٹ پنڈنگٹن کے علاوہ دیگر کمپنیاں منافع کما رہی تھیں ۔حسن نواز نے بتایا کہ خاندان کے کسی فرد کا ان کے کاروبار سے کسی قسم کا کوئی تعلق نہیں۔جبکہ عدالت نے کیس کی سماعت پیر تک ملتوی کرتے ہوئے فلیگ شپ ریفرنس کے تفتیشی افسر کو بھی طلب کر لیا۔

فلیگ شپ انوسٹمنٹ

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر ) سپریم کورٹ نے سابق وزیر اعظم نواز شریف، ان کی صاحبزادی مریم نواز اور دامادکیپٹن (ر)صفدر کی رہائی کے خلاف نیب کی اپیل سماعت کیلئے مقرر کر تے ہوئے فریقین کو نوٹسز جاری کر دیئے۔ تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ نے سابق وزیر اعظم نواز شریف، ان کی صاحبزادی مریم نواز اور دامان کیپٹن (ر)محمد صفدر کی رہائی کے خلاف قومی احتساب بیورو (نیب) کی اپیل سماعت کے لیے مقرر کر دی ،چیف جسٹس کی سربراہی میں تین رکنی خصوصی بینچ 6 نومبر کو درخواست کی سماعت کرے گا۔سماعت کے لیے نواز شریف، مریم نواز اور کیپٹن ریٹائرڈ صفدر کو نوٹس جاری کر دیئے گئے جبکہ نیب کو بھی نوٹس جاری کیا گیا۔

رہائی کیخلاف اپیل

مزید : صفحہ اول