حکومت صارفین کو قیمتوں میں اضافے کا تحفہ دینا بند کرے، کوکب اقبال

حکومت صارفین کو قیمتوں میں اضافے کا تحفہ دینا بند کرے، کوکب اقبال

کراچی(اسٹاف رپورٹر) حکومت صارفین کو قیمتوں میں اضافے کا تحفہ دینا بند کرے۔ گیس، بجلی، پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں مسلسل اضافے سے غربت کی لکیر سے نیچے زندگی گزارنے والوں کی تعداد میں کئی فیصد اضافہ ہوجائے گا۔ حکومت اپنے اخراجات پورے کرنے اور حکومت چلانے کے لیے قیمتوں میں اضافہ کرکے عوام کو مہنگائی کے دلدل میں دھکیل رہی ہے۔ جس سے نکلنا غریب عوام کے بس کی بات نہیں۔ یہ بات کنزیومر ایسوسی ایشن آف پاکستان کے چیئرمین کوکب اقبال نے قیمتوں کے سہ ماہی جائزہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہیں۔ انہوں نے کہا کہ پچھلی حکومتوں نے بھی وقتاً فوقتاً اپنے دَور حکومت میں پیٹرول، گیس اور بجلی کی قیمتوں میں کوئی نہ کوئی جواز بناکر اضافہ کیا اب جبکہ نئی حکومت جس کا الیکشن سے پہلے یہ موقف تھا کہ وہ ہر حال میں قیمتوں کو اعتدال میں لائیں گے تاکہ عام شہری کو ریلیف مل سکے اور اپنے گھر کا خرچہ بآسانی چلاسکے۔ مگر اس کے برعکس حکومتی باگ دوڑ سنبھالتے ہی گیس، بجلی، پیٹرول، ڈیزل کی قیمتوں میں تسلسل کے ساتھ اضافہ کیا جارہا ہے۔ جس کی وجہ سے عام آدمی کو زندگی بسر کرنا نا ممکن ہوتا جارہا ہے اسے نہ ہی حکومت کی طرف سے کوئی ریلیف ملنے کی توقع ہے اور نہ ہی پرائیویٹ سیکٹر سے۔ مارکیٹوں میں دال، سبزی، گوشت، مرغی اور دیگر روز مرہ کی قیمتوں مں 10 سے 15فیصد اضافہ ہوچکا ہے اور مزید اضافے کا بوجھ ڈالنے کی تیاریاں ہورہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت یہ بتائے کہ مہنگائی کی زد میں آیا ہوا ایک عام شہری اپنا گھر چلانے کے لیے اخراجات کہاں سے پورے کرے۔کنزیومر ایسوسی ایشن آف پاکستان کے چیئرمین نے کہا کہ ایک طرف حد درجہ بڑھتی ہوئی مہنگائی سے لوگ اپنے بچوں کو پانی میں بھگوکر آدھی روٹی کھلانے پر مجبور ہیں دوسری طرف ہر محکمے میں لوٹ کھسوٹ کا بازار گرم ہے۔ سپریم کورٹ کے حالیہ فیصلے کی وجہ سے پورے ملک میں اقتصادی سرگرمی معطل ہوگئی ہے جس کی وجہ سے معیشت کا پہیہ جام ہوکر رہ گیا ہے۔ لوگوں کی جان و مال تباہ و برباد ہورہی ہیں خوف کی فضا میں لوگ اپنے گھروں میں محصور ہوکر رہ گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ امن و امان سمیت لوگوں کو ریلیف فراہم کرنے کی ذمہ داری حکومت پر عائد ہوتی ہے۔کوکب اقبال نے مزید کہا کہ آئی ایم ایف کے ایما پر مسلسل ٹیکسوں میں اضافے سے کمر توڑ مہنگائی اپنے عروج پر پہنچ جائے گی۔حکومت عام آدمی کو ریلیف دینے کے لیے فوری طور پر کوئی پلان تشکیل دے۔ انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف کا مطلب سادہ زبان میں یہ ہے کہ ’آئی میں ملک کو تباہ کرنے‘۔دنیا کے جو ممالک آئی ایم ایف کے چنگل میں پھنسے وہاں نہ ہی عام آدمی کو ریلیف ملا نہ ہی حکومت اپنا تسلسل قائم رکھ سکی۔ قرضہ لے کر ملک چلانے والی پچھلی حکومت نے دْنیا میں آنے والی ایک نسل کو گروی رکھ دیا ہے۔ انہوں نے حکومت سے اپیل کی ہے کہ وہ فوری طور پر بڑھتی ہوئی قیمتوں کو کنٹرول کرنے کے لیے سب سے پہلے بجلی، گیس اور پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کو واپس لے تاکہ عام آدمی سکھ کی نیند سو سکے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر