چند روز قبل مولانا سمیع الحق نے وزیراعظم عمران خان سے ملاقات میں انہیں ان کا کون سا وعدہ یاد کروایا؟

چند روز قبل مولانا سمیع الحق نے وزیراعظم عمران خان سے ملاقات میں انہیں ان کا ...
چند روز قبل مولانا سمیع الحق نے وزیراعظم عمران خان سے ملاقات میں انہیں ان کا کون سا وعدہ یاد کروایا؟

  

اسلام آباد (صباح نیوز) شیخ الحدیث مولانا سمیع الحق کو افغان طالبان کے حلقوں میں غیر معمولی اہمیت حاصل رہی۔ افغان حکام بھی سمجھتے تھے کہ طالبان اور ان کے مختلف دھڑوں کو امن مذاکرات کی میز پر لانے کے لئے مولانا سمیع الحق مرکزی کردار ادا کرسکتے تھے۔ طالبان مولانا سمیع الحق کو اپنا روحانی استاد بھی تصور کرتے تھے۔ 12 اکتوبر 2018ءمیں وزیراعظم عمران خان سے ملاقات میں مولانا سمیع الحق نے حکومت کو افغان اور بنگالی مہاجرین کو جلد پاکستانی شہریت دینے کا وعدہ یاد دلوایا تھا۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق رواں برس دو اکتوبر کو افغان حکام اور علما نے مولانا سمیع الحق سے طالبان کے مختلف گروہوں کے درمیان ثالثی کردار ادا کرنے کی درخواست کی تھی۔ مولانا سمیع الھق ن ے چین کو بھی افغانستان میں امن سے متعلق مذاکرات میں اپنا کردار ادا کرنے پر زور دیا تھا۔ دارالعلوم حقانیہ سے جاری ہون ے والی پریس ریلیز میں کہا گیا تھا کہ افغان حکومتی حکام، علما، پاکستان میں افغان سفیر اور دارالعلوم حقانیہ کے سابقہ طالب علموں پر مشتمل ایک وفد نے مولانا سمیع الحق سے ملاقات کی۔

رواں برس 19 جولائی کو مولانا سمیع الحق نے امریکا کی جانب سے افغان طالبان کو براہ راست مذاکرات کی پیشکش کا خیرمقدم کیا تھا۔ سربراہ جے یو آئی (س) نے کہا تھا کہ افغانستان میں امن کی بحالی اور واشنگٹن کی واپسی کے لئے مذاکرات ہی واحد راستہ ہے۔ وفد کی جانب سے مولانا سمیع الحق کو یقین دلایا گیا تھا کہ افغانستان میں مفاہمت کے عمل میں وہ ان کے فیصلے کو قبول کریں گے۔

اس رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ مولانا سمیع الحق نے افغان وفد کو تجوید دی تھی کہ وہ ابتدا میں ملک کے مخلص علما اور طالبان کے درمیان ایک ملاقات کا خفیہ مقام پر انتظام کریں جس میں کسی کی مداخلت نہ ہو، تاکہ یہ دونوں ہی ایک دوسرے کے بنیادی مقاصد کو سمجھ سکیں۔ 24 اگست 2017ءدفاع پاکستان کونسل کے چیف مولانا سمیع الحق نے کہا تھا کہ پاکستان آرمی حقانی نیٹ ورک کے خلاف کارروائی نہیں کرے گی۔

یاد رہے کہ 31 دسمبر 2013 ءمیں سابق وزیراعظم نواز شریف نے مولانا سمیع الحق سے تحریک طالبان پاکستان کے دھڑوں سے امن مذاکرات کا عمل دوبارہ شروع کرنے کی درخواست کی تھی۔ مذاکرات شروع ہوئے تاہم چند دن بعد ہی 22 جنوری 2014ءکو مولانا سمیع الحق نے تحریک طالبان پاکستان سے مذاکرات کے عمل سے علیحدگی کا اعلان کیاہے۔

مزید : علاقائی /اسلام آباد