بیرون ملک پاکستانیوں نے ڈیم فنڈ کے لئے اپنی جیبیں الٹادیں، پاکستانیوں کے لئے خوشخبری آگئی

بیرون ملک پاکستانیوں نے ڈیم فنڈ کے لئے اپنی جیبیں الٹادیں، پاکستانیوں کے لئے ...
بیرون ملک پاکستانیوں نے ڈیم فنڈ کے لئے اپنی جیبیں الٹادیں، پاکستانیوں کے لئے خوشخبری آگئی

  

اوسلو (ویب ڈیسک) یورپین ممالک کے بعد سکینڈے نیوین ممالک میں مقیم پاکستانی کمیونٹی نے بھی وزیراعظم اور چیف جسٹس آف پاکستان کی طرف سے اعلان کردہ ڈیم فنڈ کے لئے نوٹوں کی بوریوں کے منہ کھول دیئے۔ ناروے میں ڈیم فنڈ ریزنگ تقریب میں 8 کروڑ روپے سے زائد کے عطیات جمع ہوگئے۔ وزیراعظم عمران خاں کے دستخط والا بیٹ ایک لاکھ کرائون اور بال 50 ہزار کرائون میں فروخت کر دیا گیا جبکہ دوسرا بیٹ ایک الکھ دس ہزار روپے میں فروخت کیا گیا۔ پی ٹی آئی کی سینیٹر فیصل جاوید خان اوسلو (ناروے) میں پاکستانیوں سے خطاب کرتے ہوئے کہا پاکستان میں ڈیم فنڈ نہ ہونے کی وجہ سے ہر سال بائیس ارب ڈالر کا پانی ضائع ہوجاتا ہے۔ وزیراعظم عمران خاں کی حکومت نے حکومت سنبھالتے ہی پہلا کام یہ کیا ہے ضائع ہونے والے پانی کا محفوظ بنایا جائے۔ اللہ تعالیٰ نے پاکستان کو اپنی ہر نعمت سے نوازا ہے لیکن ہم اس نعمت کو ضائع کر رہے ہیں پانی بھی اللہ تعالیٰ کی ایک نعمت ہے۔ انہوں نے کہا کہ 2005 تک خدشہ ظاہر کیا جا رہا کہ پاکستان میں پانی کی کمی ہوجائے۔ لیکن ہمیں ابھی سے اس پر کام کرنا ہے تاکہ ہم آنے والی نسل کو صاف شفاف پانی مہیا کر سکیں۔

فیصل جاوید خاں نے کہا اللہ تعالیٰ نے یہ کام بھی عمران خان سے ہی لینا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم نے زندگی میں چیلنجز سے مقابلہ کیا ہے۔ کینسر ہسپتال بنایا۔ کرکٹ کا ورلڈ کپ پاکستان کے نام کروایا۔ سیاست میں ایک مقام حاصل کیااور اب وزارت عظمیٰ کا قلمدان سنبھال کر پانی کو محفوظ بنانے کے لئے ڈیم بنانے کا اعلان کیا۔ انشاءاللہ وزیراعظم عمران خان چیف جسٹس آف پاکستان سے مل کر اور تارکین وطن سمیت پاکستان عوام سے مل کر ڈیم ضرور بنائیں گے۔ ک

ے پی کے سینئر وزیر شوکت یوسفزئی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان عوام کو دنیا کی کوئی طاقت نہیں ہراسکتی پاکستانی عوام جو سوچتے ہیں وہ کر کے دیکھاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سیلاب آئے ، زلزلہ آئے یا ڈیم بنانے کی بات ہو پاکستانی عوام سیاست سے ہٹ کر ایک دوسرے کی مد دکو پہنچتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان جو کہتا ہے وہ کرتا ہے۔ ڈیم بنانے کی مہم قرض اتاروملک سنوارو سکیم نہیں ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ 32 ہزار میگاواٹ بجلی کے پی کے میں بن سکتی ہے۔ مگر سابقہ حکومتوں ناقص پالیسوں کی وجہ سے ہم پن بجلی حاصل نہیں کر رہے۔ انہوں نے کہا کہ دس سال قبل ہمارا ملک چھ ارب ڈالر قرضوں کا بوجھ برداشت کررہا تھا۔ اب جب ہم نے حکومت سنبھالی ہے یہ بوجھ 30 ارب ڈالر تک پہنچ چکا ہے۔

انہوں نے کہا کہ آج ہم مشرف کو تو برا بھلاکہتے ہیں انہوں نے پاکستان پر قرضوں کے بوجھ میں اضافہ نہیں جتنا پچھلے دس سالوں میں ہوا ہے۔ دس سال حکومت کرنے والے ہمیں طعنہ دیتے ہیں ییہ ناتجربہ کار ہیں ان سے کوئی پوچھے کہ تم نے تجربہ کار ہونے کے باوجود ملک کو قرضوں میں جھکڑدیا ہے۔ تقریب سفارت خانہ پاکستان ناروے کی طرف سے منعقد کی گئی۔ جس میں پی ٹی آئی سمیت تمام پاکستان تنظیمات نے شرکت کی اور دل کھول کر عطیات دیئے۔ تقریب پاکستانی کمیونٹی کی کثیر تعداد نے شرکت کی۔

مزید : کسان پاکستان