سعودی عرب نے غیر ملکی ڈاکٹرز کو اب تک کی سب سے بڑی خوشخبری سنا دی ،ایسا حکم جاری کر دیا کہ کوئی تصور بھی نہ کر سکتا تھا

سعودی عرب نے غیر ملکی ڈاکٹرز کو اب تک کی سب سے بڑی خوشخبری سنا دی ،ایسا حکم ...
سعودی عرب نے غیر ملکی ڈاکٹرز کو اب تک کی سب سے بڑی خوشخبری سنا دی ،ایسا حکم جاری کر دیا کہ کوئی تصور بھی نہ کر سکتا تھا

  

ریاض(ڈیلی پاکستان آن لائن)سعودی شاہی حکومت نے غیر ملکی ڈاکٹروں  کے لئے اب تک کی سب سے بڑی خوشخبری سناتے ہوئے ایسا فرمان جاری کر دیا ہے کہ جسے جان کر سعودی مملکت میں مقیم ہزاروں افراد خوشی سے اچھلنے لگیں گے ۔

عرب میڈیاکے مطابق سعودی عرب میں مقیم غیر ملکیوں کو  سعودی مملکت میں ہسپتالوں اور طبی سینٹر ز کھولنے کی اجازت مل گئی ہے ۔شاہی فرما ن کے مطابق سعودی عرب میں مقیم  غیر ملکی شہری اب ہسپتالوں اور طبی مراکز ( پولی کلینکس ) کے مالک ہو سکیں گے۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے شاہی فرمان جاری کیا ہے جس میں مملکت میں ہسپتالوں اور طبی مراکز کے ملکیتی قانون میں تبدیلی کا اعلان کیا ہے ۔ نئے جاری ہونے والا شاہی فرمان  2 حصوں پر مشتمل ہے جسا میں پہلی شق میں ہسپتالوں اور طبی مراکز کے مالکان کے حوالے سے ہے جبکہ دوسری شق کلینکس کی ہے ۔ شق نمبر ایک میں کہا گیا ہے کہ ہسپتالوں اور پولی کلینکس کے مالکان کا سعودی ہونا لازمی ہے کو ختم کرکے غیر ملکیوں کو ملکیت کا حق دیا گیا ہے ۔ دوسری شق نجی کلینکس کی ہے جس کیلئے مالک کا سعودی ہونا لازمی ہے تاہم نجی کلینکس کے لئے لازمی ہے کہ سعودی مالک اسی شعبے میں سپیشلائز ہو اور وہ کسی دوسری جگہ ملازمت نہ کرتا ہو۔ واضح رہے کلینک اور پولی کلینک میں فرق ہے  ۔کلینک کا مالک سعودی شہری ہو گا اس شعبے میں غیر ملکی سرمایہ کار ی نہیں کر سکتے جبکہ نئے شاہی فرمان کے مطابق ہسپتال اور پولی کلینک کے مالکان غیر سعودی ہو سکتے ہیں ۔ 

واضح رہے کہ سعودی عرب کے ہسپتالوں میں کا م کرنے والے ڈاکٹروں کی مکمل  تعداد 89 ہزار675ہے  اور ان میں سے سعودی ڈاکٹر 23 ہزار979 ہیں جبکہ بڑی تعداد میں غیر ملکی ڈاکٹرز سعودی عرب میں خدمات سر انجام دے رہے ہیں تاہم غیر ملکی ڈاکٹروں پر اس فرمان سے پہلے پابندی عائد تھی کہ وہ سعودی عرب میں ذاتی کلینک اور ہسپتالوں کے مالک نہیں ہو سکتے تاہم اب سعودی حکومت نے اس پابندی کے خاتمے کا اعلان کرتے ہوئے غیر ملکی ڈاکٹروں کو بڑی خوشخبری سنا دی ہے ۔

مزید : عرب دنیا