سرکاری ہسپتالوں کی ممکنہ نجکاری، ڈاکٹر سراپا احتجاج، مریض مایوس

سرکاری ہسپتالوں کی ممکنہ نجکاری، ڈاکٹر سراپا احتجاج، مریض مایوس

  



ملتان (وقا ئع نگار)سرکاری ہسپتالوں کی ممکنہ نجکاری کے خلاف گرینڈ ہیلتھ الائنس کی ملتان کے سرکاری ٹیچنگ ہسپتالوں میں 23 ویں روز بھی ہڑتال کی گئی مریض علاج کے لئے تڑپتے رہے شعبہ آوٹ ڈور،آپریشن تھیٹر،ریڈیالوجی اور پتھالوجی میں بھی ہڑتال جاری،دور دراز سے آئے مریض خوار، ہو گیے۔گرینڈ ہیلتھ الائنس پنجاب نے ایم ٹی آئی ایکٹ کے خلاف پنجاب کے سرکاری ٹیچنگ ہسپتالوں کے آوٹ ڈور آپریشن تھیٹر،ریڈیالوجی اور پتھالوجی میں ہڑتال کے بعد ان ڈور میں (بقیہ نمبر40صفحہ12پر)

بھی ہڑتال کا سلسلہ جاری ہے، ملتان سمیت پنجاب بھر کے سرکاری ٹیچنگ ہسپتالوں میں 23ویں روز بھی ہڑتال جاری رہی، نشتر ہسپتال اور چلڈرن کمپلیکس کے ان ڈور ،آؤٹ ڈور سمیت آپریشن تھیٹر،پتھالوجی اور ریڈیالوجی میں ہڑتال کی گئی ہے، گرینڈ ہیلتھ الائنس ملتان کے زیر اہتمام نشتر ہسپتال میں ڈاکٹرز،نرسز اور پیرا میڈیکس کی ہڑتالوں اور حکومتی کارکردگی پر مریض پھٹ پڑے۔ نشتر ہسپتال کے وارڈز میں بھی ڈاکٹرز کی جانب سے زیر علاج مریضوں کا معائنہ رکوا کر کام بند کروا دیا گیا،جبکہ ہڑتال کے باعث بیشتر مریضوں کو وارڈز سے ڈسچارج کر دیا گیا مریضوں کا کہنا تھا کے تمام تر صورتحال کی زمے دار حکومت ہے جبکہ ڈاکٹرز کا کہنا ہے کہ پنجاب حکومت اور صوبائی وزیر صحت مذاکرات نہیں کرنا چاہتے،ادھر نشتر ہسپتال اور چلڈرن کمپلیکس کے آوٹ ڈور ان ڈور اور آپریشن تھیٹر میں ہڑتال کے باعث معائنہ کروانے، انسولین لینے کے لئے آئے بزرگ مریض،خواتین نوجوان اور بچے خوار ہوتے رہے،جبکہ اب وارڈز میں زیر علاج مریض جن کے آپریشن تک ملتوی کر دئیے گئے تھے علاج اور معائنہ کی سہولت سے بھی محروم ہو گئے ہیں،23 روز کے دوران درجنوں مریضوں کے آپریشن ملتوی کر دئیے گئے ہیں۔

ہڑتال

مزید : ملتان صفحہ آخر