"جوش خطابت میں باتیں کرنا آسان ہیں، اب مولانا ۔ ۔ ۔" جہانگیر خان ترین بھی میدان میں آگئے، دوٹوک پیغام دیدیا

"جوش خطابت میں باتیں کرنا آسان ہیں، اب مولانا ۔ ۔ ۔" جہانگیر خان ترین بھی ...

  



لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان تحریک انصاف کے سینئر رہنما جہانگیرخان ترین نے کہا ہے کہ وزیراعظم کے استعفے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا، جوش خطابت میں باتیں آسان ہیں، اب  مولانا معاہدے پر عمل کریں، امید ہے کہ معاہدے کی پاسداری کریں گے ۔ 

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے جہانگیر خان  ترین کاکہنا تھاکہ وزیراعظم کے استعفے سے متعلق بات سننے کو بھی تیار نہیں، احتجاج ان کا حق اور مرضی کاگراونڈ دیا ہے ، اب مولانا اپنا وعدہ پورا کریں۔ ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ یہ ہمیشہ اسی طرح کی باتیں کرتے ہیں، سابق حکومتوں نے معیشت کیساتھ جو کیا،آج معیشت کا جو حال ہے ،ان لوگوں کی نااہلی کا ہی نتیجہ ہے ، ہم  اسے بہتر کررہے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ معاہدے کی پاسداری کرنی چاہیے ، امید ہے اپوزیشن پاسداری کرے گی ، آزادی مارچ کو کہیں نہیں روکا بلکہ سہولتیں دیں۔ایک سوال کے جواب میں ان کاکہناتھا کہ  ہم ایکشن کے لیے ہمیشہ تیار ہیں، لیکن 2023  تک تمام کو انتظار کرنا پڑے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ تو پیداوار ہی فوج کے ہیں، انگلی پکڑ کرجنرل جیلانی لے کر آئے تھے جنہوں نے نوازشریف کو شیشے کے سامنے ٹریننگ دی کہ بولتے کیسے ہیں۔

جہانگیر ترین کاکہنا تھا کہ میں ہیلی کاپٹر میں گزرا تو پورے گرائونڈ میں دس فیصد لوگ تھے، باقی گرائونڈ خالی پڑا ہوا تھا، حکومت کام کررہی ہے،  چھ مہینے سال لگیں گے ، نوکریاں ملیں گی اور مہنگائی بھی ختم ہوگی ۔ 

مزید : قومی /سیاست