لاہور یوں نے پانچ مرلہ گھروں پر پراپرٹی ٹیکس کا فیصلہ مسترد کر دیا 

    لاہور یوں نے پانچ مرلہ گھروں پر پراپرٹی ٹیکس کا فیصلہ مسترد کر دیا 

  

         لاہور (رپورٹ:میاں اشفاق انجم، تصاویر:ایوب بشیر) اہل لاہور نے پانچ مرلہ گھروں پر پراپرٹی ٹیکس کا فیصلہ مسترد کر دیا۔یوٹیلٹی بلز اور مہنگائی نے جینا دوبھر کر رکھا ہے، بڑی مشکل سے زندگی کی سانسیں پوری ہو رہی ہیں۔ پانچ مرلہ سے پہلے دو کنال، چار کنال اور اس سے اوپر والوں سے تو پراپرٹی ٹیکس ہیں لاہور کے رہائشیوں نے پانچ مرلہ مکانوں پر ٹیکس ظلم قرار دے دیا۔ احتجاج کی دھمکی۔ پروفیسر عبدالرحیم، محمد آصف، چودھری رفیق ظفر، میاں جبران اور عبدالماجد طفیل نے روزنامہ ”پاکستان“ سے خصوصی گفتگوکرتے ہوئے کہا کہ مہنگائی نے مشکلات بڑھا دی ہیں۔ پانچ مرلہ مکان کے بلز پورے نہیں ہو رہے اور قسطیں کروا کر ادا رہے ہیں۔ ٹیکس نہیں دے سکتے۔ نوید ڈوگر نے کہا کہ غریبوں کو ویسے ہی گولی مروا دیں، عابد حنیف طور نے ظلم قرار دیتے ہوئے فیصلہ واپس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔ شیخ رمضان، مقبول احمد نے کہا حکومت امیروں سے ٹیکس لے۔ دو کنال، چار کنال پر ٹیکس نہیں ہے۔ پانچ مرلہ پر پراپرٹی ٹیکس ظلم ہے۔ حکومت یہ ظلم نہ کرے، ممکن نہیں تو غریبوں کو ایک دفعہ ہی مار دیں۔ اگر فیصلہ واپس نہ لیا گیا تو احتجاج کریں گے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -