مٹھن کوٹ، عرس تقریبات، جلوس،شرکاء پر گل پاشی، دعائیں 

مٹھن کوٹ، عرس تقریبات، جلوس،شرکاء پر گل پاشی، دعائیں 

  

  مٹھن کوٹ (نمائندہ خصوصی) برصغیر کے عظیم روحانی پیشوا وصوفی شاعر حضرت خواجہ غلام فرید ؒ کے125ویں سالانہ عر س مبار ک کے دوسرے روز کی تقریبات کا آغاز بھی حسب روایت نماز فجر کے بعد مزار فریدؒ پر قران خوانی سے ہوا اس کے بعد خطیب دربار سید کلیم اللہ شاہ نے خواجہ صاحب کی انسان دوست شخصیت کے بارے میں روشنی ڈالتے ہوئے کہا (بقیہ نمبر32صفحہ7پر)

کہ خواجہ فریدؒ اس صدی کے سب سے بڑے انسان دوست تھے انہوں نے اپنے کلام میں بھی انسانیت کی خدمت کواو لیت دینے کے بارے میں بہت کچھ تحریر کیا ہے اس کے بعد محفل سماع کا انعقاد ہوا جسمیں مختلف خانقاہوں اور درباروں سے آئے ہوئے قوالوں  کے علاوہ مقامی قوالوں نے صوفیاء کرام کا کلام سنا کر شرکاء محفل کو جھومنے پر مجبور کردیا سہ پہر کو فریدی جماعت انٹرنیشنل کے زیر اہتمام سالانہ عظیم الشان جلوس چادر پوشی سجاد ہ نشین دربار فریدؒ خواجہ معین الدین محبوب کوریجہ کی قیادت میں جس میں خانوادہ فریدؒ کے صاحبزادگان خواجہ شمس الدین کوریجہ، خواجہ کلیم الدین کوریجہ، خواجہ راول معین کوریجہ خواجہ علی معین کوریجہ، خواجہ حمزہ کلیم کوریجہِِِ ِ، صاحبزادہ عبداللہ منگھیروی، خواجہ حمیل معین کوریجہ، خواجہ شا ویز شمس کوریجہ،  شامل تھے ہزاروں لوگوں پر مشتمل یہ عظیم الشان جلوس حق فرید یافرید کے نعروں سے گونجتاہوا قصرفرید سے روانہ ہوا۔اس میں ملک بھرسے آئے ہوئے عقیدت مندان جو اپنے اپنے حلقے کی طرف سے ایک سے بڑھ کر ایک خوبصور ت چادر کا تحفہ لے کر یہاں پہنچے ہیں۔اور خواجہ صاحب کے مزار پرچڑھانے کیلئے ایک ترتیب اورنہایت ہی پر امن طریقے سے خوشی سے بھنگڑے ڈالتے حق فرید یافرید کے نعرے لگاتے ہوئے دربار فریدؒ کی طرف بڑھتے گئے۔جلوس میں ملک کے نامور شہنائی نواز بھی اپنے طیفے کے ساتھ فن کا مظاہرہ کیا اورجلوس کے ساتھ ساتھ دربارشریف تک شہنائی کی خوبصورت دھنیں زائرین اورعوام کی دلچسپی کیلئے سنائی گئیں۔اس کے علاوہ جلوس میں مختلف قوالوں کی پارٹیاں الگ الگ عارفانہ کلام سناتے ہوئے ساتھ چلتی رہیں۔راستے میں مختلف مقامات پر جلوس پر پھولوں کی پتیاں نچھاورکرنے کیلئے مقامی  لوگوں نے جلوس کا بھرپور استقبال کیا۔ چادروں کایہ عظیم الشان جلوس فوارہ چوک پر اختتام پذیر ہوا۔آخر میں سجادہ نشین دربارفرید خواجہ معین الدین محبوب کوریجہ نے ملک و قوم کی خیروبرکت،استحکام اور سالمیت، پاک فوج کی کامیابی،سلامتی عرس پر آنے والے تمام زائرین اور تمام مسلم امہ کی خیروبرکت کی دعاکرائیعظیم روحانی بزرگ اور صوفی شاعر حضرت خواجہ غلام فریدؒ کے عرس کے موقع پر مزار فریدؒ پر محکمہ اوقاف پنجاب کے زیر اہتمام قومی عظمت فرید ؒ کانفرنس کا انعقاد   کیا گیا جس کی صدارت ولی عہد مزار فرید خواجہ راول معین کوریجہ نے کی اس موقع پر انہوں نے اپنے خطاب میں کہا کہ برصغیر پاک وہند میں دین اسلام کی ترویج میں صوفیا کرام کا کردار اہم رہا ہے اور خواجہ فریدؒ ان میں اہم نام ہے جنہوں نے اپنے اخلاق اور کردار کے ذریعے پاک وہند میں ہزاروں غیر مسلموں کو مشرف بہ اسلام کیا انہوں نے رنگ ونسل کی تمیز کے بغیر انسانوں کے درمیان یگانگت اور محبت پیدا کی اور ہر نسل کے لوگوں کو ایک دوسرے کے قریب لا کر خطہ میں پر امن ماحول پید ا کیاآج بھی صوفیاء کی تعلیمات کو سرکاری سرپرستی میں فروغ دے کر ملک سے فرقہ واریت اور دہشت گردی کا خاتمہ ممکن ہو سکتا ہے ڈسٹرکٹ خطیب سید کلیم اللہ شاہ نے عظت فریدکانفرنس میں حضرت خواجہ غلام فریدؒکے حوالے سے اپنے خطاب میں کہاکہ حضرت خواجہ غلام فریدؒنے اپنے سماج میں عشق و محبت اور عشق رسول ﷺکی خوشبو تقسیم فرمائی ہے۔ ان بزرگوں کی تعلیمات ہی وہ واحد ذریعہ ہیں جو امت کو متحد کرسکتی ہیں حبیب الرحمن فریدی  اور دیگر مقررین نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ سارے نسخے آزمائے جاچکے ہیں صرف ایک ہی نسخہ ایسا ہے جو معاشرے کو امن کی نعمت دے سکتاہے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -