شمالی کوریا کے 23 میزائلوں کے جواب میں جنوبی کوریا نے بھی میزائل داغ دیئے ، امریکہ کا رد عمل بھی آ گیا 

شمالی کوریا کے 23 میزائلوں کے جواب میں جنوبی کوریا نے بھی میزائل داغ دیئے ، ...
شمالی کوریا کے 23 میزائلوں کے جواب میں جنوبی کوریا نے بھی میزائل داغ دیئے ، امریکہ کا رد عمل بھی آ گیا 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

سیول(ڈیلی پاکستان آن لائن )شمالی کوریا کی جانب سے گزشتہ روز 23 میزائل فائر کیئے گئے جن میں سے ایک میزائل 60 کلومیٹر پیچھے جنوبی کوریا کی ساحلی پٹی پر گرا جسے جنوبی کوریا کے صدر ’یون سک یول ‘ نے سرحدی خلاف ورزی قرار دیا جبکہ واشنگٹن نے لاپرواہی قرار دیتے ہوئے مذمت کی ۔
غیر ملکی خبر رساں ادارے "رائٹرز" کے مطابق 1945 میں ہونے والی تقسیم کے بعد یہ پہلی مرتبہ ہے جب شمالی کوریا نے ایک ہی روز میں اتنے زیادہ میزائل فائر کیئے اور ان میں سے ایک جنوبی کوریا کے ساحل پر گرا، جنوبی کوریا کی جانب سے فضائی حملے کی وارننگ جاری کی گئی اور جواب میں میزائل داغے گئے ۔
شمالی کوریا کی جانب سے میزائل داغے جانے کا عمل امریکہ اور جنوبی کوریا کی بھاری بھرکم ملٹری مشقوں کو روکنے کے مطالبے کے بعد سامنے آیا، پیانگ یانگ کا کہناتھا کہ اس طرح کی فوجی مشقیں اور اشتعال انگیزی ہرگزبرداشت نہیں کی جائے گی ۔
وائٹ ہاﺅس کے نیشنل سیکیورٹی کے ترجمان جان کربی نے شمالی کوریا کی جانب سے میزائل فائر کرنے عمل کو ’ لاپرواہی ‘ قرار دیتے ہوئے کہا کہ امریکہ اس چیز کی یقین دہانی کرے گا اس کی فوجی صلاحیتیں درست مقام پر موجود ہیں تاکہ وہ اپنے اتحادی جنوبی کوریا اور جاپان کا دفاع کر سکے ۔
شمالی کوریا کے جواب میں جنوبی کوریا کے جنگی جہازوں نے فضا سے زمین پر مار کرنے والے تین مزائل سمندر میں داغے ، بتایا گیا کہ اس جوابی کارروائی میں جو ہتھیار استعمال کیئے گئے ان میں AGM-84H/K SLAM-ER شامل تھے جو کہ امریکی ساختہ ہیں ، اس میزائل کی رینج 270 کلومیٹر ہے اور یہ روایتی ہتھیار لے جانے کی صلاحیت بھی رکھتا ہے ۔