ایمرجنسی پلان سے آتشزدگی کے واقعات پرقابوپایاجاسکتاہے،ڈاکٹر ارشدضیاء

ایمرجنسی پلان سے آتشزدگی کے واقعات پرقابوپایاجاسکتاہے،ڈاکٹر ارشدضیاء

لاہور(کرائم سیل)ڈائریکٹرپنجاب ایمرجنسی سروس بریگیڈئیر(ر) ڈاکٹر ارشد ضیاء نے گزشتہ روز ہیڈ کوارٹرز ریسکیو1122میں ایک میٹنگ کی صدارت کرتے ہوئے پنجاب کے تمام اضلاع میں ریسکیو 1122کی ماہانہ کارکردگی کا جائزہ لیا۔جسکا مقصد سروس کی کارکردگی اوربِناکسی تفریق کے تمام شہریوں کویکساں معیارکی ایمرجنسی سروسز ڈیلوری کویقینی بنانا ہے۔ ایمرجنسی سروس ریسکیو 1122 کے اعدادو شمار کے مطابق ریسکیو1122نے ستمبر میں پنجاب بھر میں اپنے سات منٹ ریسپانس ٹائم کو برقراررکھتے ہوئے 52853ریسکیوآپریشن کے دوران 55487ایمرجنسی متاثرین کو ریسکیوکیامیٹنگ میں رجسٹرار/ پراونشل مانیٹرنگ آفیسر ڈاکٹر فرحان خالد، ڈپٹی ڈائریکٹر (ایچ آر)ڈاکٹر فواد شہزاد مرزا، ڈپٹی ڈائریکٹر (پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ) فہیم احمد قریشی،ہیڈ آف آپریشنز ایاز اسلم اور ڈپٹی ڈائریکٹر (فنانس) نعیم مختار سمیت دیگر سینئر افسران نے شرکت کی ریسکیو 1122کے پراونشل مانیٹرنگ سیل کو موصول ہونے والی ایمرجنسی کالز کا موازنہ کیا جائے تو ان میں20268کال ٹریفک حادثات،23785 میڈیکل ایمرجنسی،785آگ لگنے کے واقعات ،1945جرائم کی کال105,ڈوبنے کے واقعات, 86عمارتیں منہدم ہونے کے واقعات،12دھماکوں کے واقعات اور 5867دیگر ریسکیو آپریشن شامل ہیں جن پر ریسکیو1122نے ریسپانڈ کیااعداد و شمار کے مطابق 225آگ کے واقعات لاہور میں، 91فیصل آباد ،47گوجرانوالہ ،70راولپنڈی، 51ملتان اور سیالکوٹ میں30پیش آئے۔ اسی طرح 3941ٹریفک حادثات لاہور میں، 2004فیصل آباد، 1310گوجرانوالہ، 1198ملتان جبکہ راولپنڈی میں872ٹریفک حادثات رونما ہوئے جہاں ٹریفک قوانین کے نفاذ کی ضرورت ہے ڈائریکٹر پنجاب ایمرجنسی سروس نے کہا کہ بلڈنگ بائی لاز کے مطابق فائرسیفٹی کوڈز پرعملدرآمد وقت کی اہم ضرورت ہے کیونکہ ایکسٹرنل سٹیل سٹیئرکیس، فائرڈورز، ایکسٹرنل ہائیڈرنٹس، ایمرجنسی انخلاء کانقشہ، ایمرجنسی پلان، آگ بجھانے کے آلات، اور بلندوبالاعمارات کی چھتوں اور اردگرد تجاوزات کو ہٹانے سے آتشزدگی کے واقعات پرجلدکنٹرول کیاجاسکتاہے ۔انہوں نے کہا کہ پنجاب بھر میں روڈ ٹریفک کریشز کے تناسب میں اضافہ ہواہے جیساکہ ریسکیو1122روزانہ کی بنیاد پر اوسطً 500سے زائد روڈ ٹریفک حادثات پر ریسپانڈ کرتا ہے زندگیوں کو بچانے کے لیے شہریوں کو چاہیے کہ وہ اپنا کردار ادا کریں۔ڈاکٹر ارشد ضیاء کا کہنا تھا کہ اگرچہ ریسکیو1122لوگوں کی مدد کے لیے ہر وقت موجود ہے لیکن شہری اپنی زندگیاں خطرے میں مت ڈالیں۔

مزید : علاقائی