شام میں فوج کارروائی تین سے چار ماہ تک جاری رہ سکتی ہے:روس

شام میں فوج کارروائی تین سے چار ماہ تک جاری رہ سکتی ہے:روس
شام میں فوج کارروائی تین سے چار ماہ تک جاری رہ سکتی ہے:روس

  

ماسکو(مانیٹرنگ ڈیسک)روسی پارلیمنٹ کی خارجہ تعلقات کمیٹی کے چیئرمین نے دعویٰ کیا ہے کہ شام میںشروع کی گئی فوجی کارروائی تین سے چار ماہ تک جاری رہ سکتی ہے۔ العریبہ کے مطابق خارجہ تعلقات کمیٹی کے چیئرمین کا کہنا تھا کہ آنے والے دنوں میں روسی فوج شام میں فضائی حملوں میں مزید شدت لائے گی۔"یورپ 1" ریڈیو سے بات کرتے ہوئے روسی رکن پارلیمنٹ نے کہا کہ شام میں فوجی مشن کے طول پکڑنے امکانات اور خطرات موجود ہیں مگر فی الحال ماسکو کا ارادہ تین سے چار ماہ تک آپریشن جاری رکھنے تک محدود ہے۔ تاہم آنے والے دنوں میں مخصوص اہداف پر حملے تیز کیے جائیں گے۔

درایں اثناء امریکی حکومت نے شام میں روسی فوج کے فضائی حملوں پر ایک بار پھرتحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ روسی فوج کا ہدف دولت اسلامی "داعش" نہیں بلکہ روس اعتدال پسند انقلابی قوتوں کو نشانہ بنا رہا ہے۔العربیہ کی رپورٹ میں کہا گیاہے کہ وائٹ ہاﺅس کی جانب سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ روس کے خیال میں "داعش" صدر بشارالاسد کو تحفظ دینے کا ایک ذریعہ ہے۔ یہی وجہ ہے ماسکو داعش کو اپنے حملوں کا ہدف نہیں بنا رہا ہے۔ وائیٹ ہاﺅس کا مزید کہنا ہے کہ روسی حکومت شام میں فضائی حملوں کے اخراجات کا تعین کرنا چاہیے۔

مزید : بین الاقوامی