سعودی شہری انٹرنیٹ پر ”پیار “ تلاش کرنے لگے

سعودی شہری انٹرنیٹ پر ”پیار “ تلاش کرنے لگے
 سعودی شہری انٹرنیٹ پر ”پیار “ تلاش کرنے لگے

ابھا(مانیٹرنگ ڈیسک)سعودی شہری سوشلائیزیشن یا پھر ایک دوسرے سے رابطے کیلئے ہی آن لائن ویب سائٹس استعمال نہیں کرتے  بلکہ مختلف سروے میں یہ انکشاف ہواہے کہ انکی ایک خاصی تعداد سوشل میڈیا کی ویب سائٹس پر ”پیار “کی تلاش میں مصروف رہتی ہے ۔

عرب نیوز کے مطابق متعد دسعودی خواتین نے سروے کے دوران بتایا کہ فیس بک اور ٹوئٹر سمیت دیگر سوشل میڈیا کی دیگر ویب سائٹس ملک میں موجود 15لاکھ سے زائد غیرشادی شدہ لڑکیوں  کو اپنا جیون ساتھی ڈھونڈنے میں مدد کررہی ہیں۔ایک اور سروے میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ مستقبل قریب میں ملک میں ”غیر شادی شدہ خواتین“ کی تعداد40لاکھ سے تجاوز کرجائیگی۔

انٹر نیٹ کے ذریعے ہونے والے سروے میں یہ حقیقت سامنے آئی ہے کہ سعودی شہریو ں میں وسیع پیمانے پر ٹوئٹر صارفین پائے جاتے ہیں،6ہزار سے زائد افراد پر کئے گئے اس سروے میں پتہ چلا کہ 87فیصد شہری ٹوئٹر جبکہ 44فیصد فیس بک استعمال کرتے ہیں اور روازنہ دو سے تین گھنٹے سوشل میڈیا کی ویب سائٹس پر گزارتے ہیں۔

سروے میں یہ بھی انکشاف ہوا ہے کہ 65فیصد سعودی لڑکیاں اپنا  جیون ساتھی ڈھونڈنے کیلئے سوشل میڈیا کا استعمال کرتی ہیں جبکہ باقیوں کا کہناہے کہ اس طرح کے سنجیدہ کام کیلئے سوشل میڈیا کی بجائے روایتی طریقہ اپنانا چاہئے۔

الانود علی نامی ایک خاتون نے کہا کہ سوشل میڈیا جیون ساتھی کی تلاش کیلئے مناسب فورم نہیں کیونکہ مردوں کی اکثریت اپنی ”ذاتی خواہشات “کی تکمیل کیلئے عورتوں کو ”استعمال “ کرتے ہیں۔عرب نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ جیون ساتھی تلاش کا روایتی طریقہ بہترین ہے کیونکہ انٹرنیٹ کے ذریعے پروان چڑھنے والی محبتوں اور پھر شادیوں کا انجام ”طلاق “ کی صورت میں نکلتا ہے ۔

مفتی اعظم عبدالعزیز الشیخ نے کہا کہ ملک میں”کنواروں “کی تعداد میں اضافہ بدقسمتی ہے ایسی حالت میں اس کا حل نکالنے کیلئے فوری اورسخت اقدامات کی ضرورت ہے ۔

ام القراءیونیورسٹی کے سوشل سائنس کے پروفیسر محمود کسوانی نے کہا ہے کہ سوشل میڈیا نے انسانی زندگی بدل کررکھ دی ہے ہمیں چاہئے کہ ہم انٹر نیٹ کو مثبت کاموں کیلئے استعمال کریں ۔خاص طور پر عورتوں کوچاہئے کہ وہ ”جیون ساتھی “ کیلئے صبر سے کام لیں اور اس وقت تک کسی کیساتھ رشتہ نہ جوڑیں جب تک اس کے بارے میں کافی معلومات حاصل نہ کرلی جائیں۔ماہرتعلیم منا الکردی کا کہناہے کہ آن لائن ”جیون ساتھی“ ڈھونڈنا ایک دو دھاری تلوار کی طرح ہے ۔

مزید : ڈیلی بائیٹس

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...