اترپردیش میں انتہا پسند ہندو نے نچلی ذات کے 90سالہ دلت بزرگ کو زندہ جلا دیا

اترپردیش میں انتہا پسند ہندو نے نچلی ذات کے 90سالہ دلت بزرگ کو زندہ جلا دیا

جھانسی (مانیٹرنگ ڈیسک)بھارتی ریاست اترپردیش میں نشے میں دھت انتہا پسند ہندو نے نچلی ذات کے 90سالہ دلت بزرگ کو مندر جانے سے روک کر زندہ جلا دیا ۔ ٹائمز آف انڈیا میں شائع خبر میں بتایا گیا ہے کہ قتل یہ دہشت ناک واقعہ ضلع حمیر پور کے نواحی گاﺅں میں پیش آیا ہے جہاں 90سالہ دلت بزرگ خیما آخیرواراپنی بیوی بسنتی اور دیگر رشتہ داروں کے ہمراہ مندر جا رہاتھا کہ راستے میں نشے میں دھت انتہا پسند سنجے تیواری نے اپنے ساتھیوں کے ہمراہ انہیں روک لیا اور سنجے تیواری نے کلہاڑی کے وار کرکے بزرگ دلت کو شدید زخمی کر دیا اسی اثناءمیں خیماآخیر وار کی بیوی اور رشتہ دار انتہا پسندوں سے بچ نکلنے میں کامیاب ہو گئے ۔ متاثرہ خاندان نے گاﺅں پہنچ کر دیہاتیوں کو اطلاع کر دی جس پر لوگوں نے فوری جائے حادثہ پر آکر نشے میں دھت تیواری کو قابو میں کر لیا اور پولیس کے حوالے کر دیا تاہم دیہاتیوں کے پہنچنے سے پہلے وہ بزرگ دلت کو زندہ جلا چکا تھا ۔

پولیس حکام کا کہنا ہے کہ ملزم سنجے تیواری جرم کے وقت نشے میں دھت تھا ، ملزم نے مقتول کو مندر میں داخل ہونے کے تنازعے پر قتل نہیں کیا بلکہ یہ رقم کے لین دین کا تنازعہ تھا ۔ سنجے تیواری نے کوئی رقم مانگی تھی مقتول کے انکار پر اس نے اسے قتل کیا ۔ پولیس نے مزید بتایا ہے کہ مرکزی ملزم سنجے تیوار ی اور اس کے تین ساتھیوں کو گرفتار کر کے مقدمہ درج کرلیا گیا ہے ، مزید تحقیقات کے بعد کارروائی آگے بڑھے گی ۔

دوسری جانب دیہاتیوں کا کہنا ہے کہ سنجے تیواری نشے کا عادی ہے اور یہ ہرکسی کے لئے مشکلات کھڑی کرتا رہتا ہے ، ہر کوئی اس سے تنگ ہے ۔ دیہاتیوں نے اس کیخلاف کئی بار پولیس کو شکایتیں کیں پر کوئی کارروائی عمل میں نہیں لائی گئی۔

مزید : بین الاقوامی

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...