کورونا سے مزید 15افراد جاں بحق، 625نئے کیس، کراچی کے 48مقامات پر 2ہفتوں کیلئے مائیکر و سمارٹ لاک ڈاؤن نافذ ایس او پیز کی خلاف ورزی پر 6شادی ہالز اور 103ریسٹورنٹس، بیکریاں سیل 

      کورونا سے مزید 15افراد جاں بحق، 625نئے کیس، کراچی کے 48مقامات پر 2ہفتوں ...

  

 لاہور، اسلام آباد،کراچی(جنرل رپورٹر، لیڈی رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)ملک کے متعدد علاقوں کورونا کے کیسز میں پھر اضافہ ہونے لگا  گزشتہ 24گھنٹوں کے دوران کورونا وائرس سے 15 افراد جاں بحق ہوگئے، جس کے بعد اموات کی تعداد 6 ہزار 499 ہوگئی۔ پاکستان میں کورونا کے تصدیق شدہ کیسز کی تعداد 3 لاکھ 13 ہزار 431 ہوگئی۔نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کے تازہ ترین اعدادوشمار کے مطابق گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 625 نئے کیسز رپورٹ ہوئے دوسری طرف شہر قائد میں کورونا کی دوسری لہر کے باعث ضلع وسطی کے 48 مقامات پر 2 ہفتوں کیلئے مائیکرواسمارٹ لاک ڈاون نافذ کردیا گیا اور ان مقامات پر ماسک کے استعمال کی پابندی لازمی قرار دی ہے۔   ان علاقوں میں میں نارتھ کراچی کے 4 اور نارتھ ناظم آباد کے 21مقامات شامل ہیں۔ لیاقت آباد کے 9 اور گلبرگ کے 12 مقامات پر بھی عملدرآمد شروع کردیا گیا ہے، مائیکرو اسمارٹ لاک ڈا ون کے مقامات پر ماسک کے استعمال کی پابندی لازمی قرار دی ہے۔ مائیکرو اسمارٹ لاک ڈا ون کے مقامات پر کاروبار بند رکھنے، میڈیکل اسٹوراورضروری اشیاکی دکانیں مخصوص ٹائمنگ میں کھولنے کے احکامات جاری کئے ہیں۔ مائیکرواسمارٹ لاک ڈا ون کے مقامات پر ٹرانسپورٹ سروس بندش کے احکامات بھی دیئے گئے جبکہ ان مقامات پر گھر کا ایک فرد کو ضروری اشیاکی خریداری کیلئے نکلنے کی اجازت ہوگی۔دریں اثنا کراچی میں ایس او پیز کی خلاف ورزی پر 6 شادی ہالز اور 103ریسٹورنٹس  اور بیکریاں بند کردیے گئے، نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سنٹر کا کہنا ہے کہ شادی ہال اور ریسٹورنٹس کے کورونا مرکز بننے کا خدشہ ہے، صحت عامہ کی حفاظت کیلئے قانون شکنوں کے خلاف کارروائی کریں۔۔ این سی اوسی نے صوبوں کو کورونا ایس اوپیز گائیڈ لائنز پر عملدرآمدکی ہدایت کرتے ہوئے گلگت بلتستان،کشمیر،اسلام آباد میں کوروناایس اوپیز پر عملدرآمد کی ہدایت کی۔ پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن نے بھی کورونا وائرس کی دوسری لہر سے پاکستان کے متاثر ہونے کے خدشے  کا اظہار کردیا۔ اس حوالے سے پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن کا کہنا ہے کہ پاکستان کورونا کی دوسری لہر سے متاثر ہونے کے خطرے سے دوچار ہے، کیوں کہ کراچی سمیت صوبہ سندھ بھرمیں کورونا کیسزمیں ہونے والا حالیہ اضافہ ایس او پیز سے دوری کی وجہ سے ہوا۔پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن کی طرف سے کہا گیا ہے کہ سکول کھلنے کے بعد پرائمری اورپری پرائمری کلاسوں میں بچوں کو خاص احتیاط کی ضرورت ہے۔  جنرل رپورٹر کے مطابق صوبائی دارالحکومت کے 95 فیصد سے زائد عوام نے کرونا ایس او پیز پر عملدرآمد چھوڑ دیا ہے۔محکمہ صحت ذرائع کے مطابق95فیصد شہریوں نے ماسک کا استعمال ترک کر دیا ہے۔ 90 فیصد شہری سماجی فاصلوں اور ہینڈ سینی ٹائزر کا استعمال کرنا بھول گئے ہیں۔ حجام، بیوٹی سیلونز، بازار، شاپنگ مالز، نجی و سرکاری دفاتر میں کرونا ایس او پیز پر عملدرآمد نہ ہونے کے برابرنظر آتاہے۔ ہسپتالوں میں بھی ماسک اور سماجی فاصلوں پر عملدرآمد نہیں کیا جا رہا۔ذرائع کے مطابق ضلعی انتظامیہ اور محکمہ صحت کی جانب سے ایس او پیز کی خلاف ورزیوں پر کوئی ایکشن نہیں لیا جا رہا۔اس حوالے سے  وائس چیئرمین کرونا  ایکسپرٹ  ایڈوائزری گروپ پنجاب پروفیسر ڈاکٹر اسد اسلم خان کا کہنا ہے کہ کورونا ایس او پیز پر عملدرآمد نہ کیا گیا تو نقصان اٹھانا پر سکتا ہے۔ اکتوبر کے آخر اور دسمبر میں کورونا وائرس کی دوسری لہر شدت کے ساتھ آ سکتی ہے۔لیڈی رپورٹر کے مطابق صوبائی دالحکومت کے گورنمنٹ سکولز میں کورونا ایس او پیز کی خلا ف ورزیاں ہونے لگیں۔طلباء نے ماسک کے استعمال کو ترک کرنا معمول بنا لیا۔جبکہ پرائیوٹ سکولز میں کوروناایس او پیز پر سختی سے عملدر آمد دیکھنے میں آیا ہے۔ دوسری طرف وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے کہا ہے کہ پنجاب میں گزشتہ 24گھنٹے کے دوران کورونا کے 126 نئے کیس سامنے آئے ہیں اورصوبے میں کورونا کے ایکٹو مریضوں کی تعداد 1681 ہے-گزشتہ 24گھنٹے کے دوران کوروناکے2مریض جاں بحق ہوئے جبکہ99605 مریضوں میں سے 95687 مریض صحت یاب ہوچکے ہیں -پنجاب میں اب تک1263117 ٹیسٹ کئے جا چکے ہیں اورگزشتہ 24گھنٹے کے دوران11722 ٹیسٹ کئے گئے-وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے کہاکہ احتیاطی تدابیر اختیار کرکے کورونا کے ساتھ رہنا ہے-پنجاب میں انسداد کورونا کے لئے مؤثر اقدامات کے مثبت نتائج سامنے آئے-دیگر صوبو ں کے مقابلے میں پنجاب میں کورونا کی وبا کوبہت حد تک روکنے میں کامیاب رہے ہیں -تعلیمی اداروں میں انسداد کورونا کے لئے ایس او پیز کی خلاف ورزی برداشت نہیں کی جائے گی -

کورونا

مزید :

صفحہ اول -