کورونا کا شکار امریکی صدر بخار اور سردرد کی شکایت کے بعد ہسپتال منتقل

کورونا کا شکار امریکی صدر بخار اور سردرد کی شکایت کے بعد ہسپتال منتقل
کورونا کا شکار امریکی صدر بخار اور سردرد کی شکایت کے بعد ہسپتال منتقل

  

واشنگٹن (ڈیلی پاکستان آن لائن) کورونا کا شکار امریکی صدر کو سانس لینے میں درپیش مشکلات کی وجہ سے والٹر لیڈ ملٹری میڈیکل سنٹر  منتقل کر دیا گیا ، ان کے ایک ایڈوائزر نے بھی تصدیق کردی کہ سانس لینے میں دشواری کی وجہ سے جمعہ کی شام کو ہسپتال منتقل کیا گیا جبکہ ان کی اہلیہ میلانیا نے کھانسی اور سر درد کے بعد خود کو قرنطینہ کرلیا، ٹرمپ ہسپتال سے ہی ذمہ داریاں ادا کرتے رہیں گے۔

 ٹرمپ کو ہیلی کاپٹر کے ذریعے ہسپتال منتقل کیا گیا وہ کسی سہارے کے بغیر خود چل کر ہسپتال روانہ ہوئے، ہسپتال جاتے وقت صدر ٹرمپ نے ماسک بھی پہن رکھا تھااور صحافیوں کو دیکھ کر سب اچھا کی رپورٹ دینے کیلئے  انگوٹھا دکھایا، امید کی جارہی ہے کہ وہ کچھ دن ہسپتال میں ہی رہیں گے۔ ٹرمپ اور ان کی اہلیہ کو کورونا ٹیسٹ مثبت آنے کے بعد اینٹی باڈیز کا انجکشن دیا گیا۔وائٹ ہاوس کا کہنا ہے کہ امریکی صدر کی حالت بہتر ہے، انہیں حفاظتی اقدامات کے طور پر ہسپتال منتقل کیا گیا، ٹرمپ ہسپتال سے ہی ذمہ داریاں ادا کرتے رہیں گے ، انہوں نے ذمہ داریاں نائب صدر کے سپرد نہیں کیں۔

ہسپتال منتقلی سے پہلے اپنے پیغام میں ٹرمپ نے صحت یابی کی دعاؤں پر لوگوں کا شکریہ ادا کیا۔ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ طبیعت بہتر ہو رہی ہے، اہلیہ میلانیا بھی ٹھیک ہے۔ وبا کا شکار ہونے پر ٹرمپ کی انتخابی مہم بھی معطل ہوگئی۔امریکا میں کئے گئے سروے کے نتائج بھی سامنے آئے ہیں جس میں 40 فیصد ڈیموکریٹک ووٹرز نے ٹرمپ کی صدارتی مہم متاثر ہونے پر خوشی کا اظہار کیا ہے، ری پبلیکن ووٹرز کی بڑی تعداد اداس اور پریشان ہے، 17 فیصد نے ٹرمپ کے کورونا سے متاثر ہونے پر حیرانی کا اظہار کیا ہے۔

مزید :

اہم خبریں -بین الاقوامی -