پریم کھلی پھلواری ہے|سلام مچھلی شہری|

پریم کھلی پھلواری ہے|سلام مچھلی شہری|
پریم کھلی پھلواری ہے|سلام مچھلی شہری|

  

پریم کھلی پھلواری ہے

پریم کھلی پھلواری ہے

اس پھلواری ساری رُت 

دل والوں کو پیاری ہے

پریم کھلی پھلواری ہے

جگ کی ٹھوکر کھا کر راہی

اس میں دل بہلاتے ہیں

ان ہنس مکھ پھولوں کے نیچے

ہنستے ہیں ، مسکاتے ہیں

اس کی ہر رُت نیاری ہے

پریم کھلی پھلواری ہے

پھول کھلیں گے مرجھا جائیں گے

اور پھر کلیاں پھوٹیں گی

پھلواری کی نازک سکھیاں

پریم سے کیسے پھوٹیں گی

دنیا پریم کی ماری ہے

پریم کھلی پھلواری ہے

شاعر: سلام مچھلی شہری

(شعری مجموعہ: پائل ؛1944)

Paraim   Khili    Phulwaari   Hay

Paraim   Khili    Phulwaari   Hay

Iss   Phulwaari   Ki   Saari   Rut

Dil   Waalon   Ko   Payaari   Hay

Paraim   Khili    Phulwaari   Hay

Jag   Ki   Thokar   Kha   Kar   Raahi

Iss   Men   Dil    Behlaatay   Hen

In   Hans   Mukh    Phoolon   K   Neechay 

Hanstay   Hen   Muskaatay   Hen

Iss   Ki   Har  Rut   Nayaari   Hay

Paraim   Khili    Phulwaari   Hay

Phool   Khilaen   Gay   Murjhaaen   Gay

Aor   Phir   Kaliyaan   Phootten   Gi

Phulwaari    Ki naazuk   Sakhiyaan 

Paraim   Say   Kaisay   Chhooten   Gi

Dunya   Parain   Ki   Maari   Hay

Paraim   Khili    Phulwaari   Hay

Poet: Salam   Machhli    Shehri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -