پھول کھلنے لگے مسکرانے لگے|سلام مچھلی شہری|

پھول کھلنے لگے مسکرانے لگے|سلام مچھلی شہری|
پھول کھلنے لگے مسکرانے لگے|سلام مچھلی شہری|

  

پھول کھلنے لگے مسکرانے لگے

پھر چمن کے وہ دن یاد آنے گلے

پھر غموں نے سہانی غزل چھیڑ دی

تاربربط کے پھر تھرتھرانے لگے

پھر وہی مرمریں خواب اکثر مجھے

چاندنی رات میں یاد آنے لگے

پھر سلام اپنی ہر تازہ تخلیل پر

گنگنانے لگے مسکرانے لگے

شاعر: سلام مچھلی شہری

(شعری مجموعہ: پائل ؛1944)

Phool   Khilnay   Lagay   Muskaraanay   Lagay

Phir   Chaman   K   Wo   Din   Yaad   Aanay   Lagay

Phir    Ghamon   Nay   Suhaani   Ghazal   Chhairr   Di

Taar   Barbat   K   Phir   Thartharaanay   Lagay

Phir   Wahi   Marmareen   Khaab  Aksar   Mujhay

Chaandi   Raat   Men    Yaad    Aanay   Lagay

Phir   SALAM    Apni   Har    Taaza   Takhayyal   Par

Gungunaanay   Lagay    Muskaraanay   Lagay

Poet: Salam   Machhli    Shehri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -