تہہ بہ تہہ اُلجھی ہوئی راہ گزر میں گم تھا|سلطان اختر|

تہہ بہ تہہ اُلجھی ہوئی راہ گزر میں گم تھا|سلطان اختر|
تہہ بہ تہہ اُلجھی ہوئی راہ گزر میں گم تھا|سلطان اختر|

  

تہہ بہ تہہ اُلجھی ہوئی راہ گزر میں گم تھا

میں ہر ایک لمحہ بلا خیز سفرمیں گم تھا

ایک افسردہ و نمناک فضا روشن تھی

اور میں خوف کے تاریک کھنڈر میں گم تھا

تہہِ گرداب نہاں تھا نہ سرِ آب عیاں

یعنی وہ حلقۂ صد موجِ ہنر میں گم تھا

جستجو خاک اُڑاتی رہی شہروں شہروں

اپنا سرمایۂ جاں اپنے ہی گھر میں گم تھا

ہر قدم پر نئی دیوار تھی محرومی کی

حوصلہ خاک اُڑانے کا سفر میں گم تھا

شاعر: سلطان اختر

(شعری مجموعہ: پسِ عرضِ ہنر؛ سالِ اشاعت، 2016)

Teh   Ba   Teh   Uljhi   Hui    Raah   Guzar   Men   Gum   Tha

Main    Har   Aik    Lamha   Balaa   Khaiz   Safar  Men   Gum   Tha

Aik   Afsurda -o-Namaak   Faza   Raoshan   Thi

Aor   Main   Khaof   K   Tareek   Khnadar    Men   Gum   Tha

Teh -e-Gardaab   Nihaan   Tha   Na   Sar-e-Aaab   Ayaan

Yaani   Wo    Halqa-e-Sad   Maoj -e-Hunar   Men   Gum   Tha

Justujoo   Khaak    Urraati   Rahi    Shehron   Shehron

Apna   Sarmaaya-e-Jaan    Apnay    Hi    Ghar   Men   Gum   Tha

Har    Qadam    Par    Nai    Dewaar    Thi    Mehroomi   Ki

Haosla   Khaak    Urraanay   K   Safar  Ghar   Men   Gum   Tha

Poet: Sultan   Akhtar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -