کرونا ڈوز سے طالب علم جاں بحق،واقعہ کی انکوائری رپورٹ مکمل

کرونا ڈوز سے طالب علم جاں بحق،واقعہ کی انکوائری رپورٹ مکمل

  

میلسی (نامہ نگار)سیکرٹری پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ عمران سکندر کی ہدایت پر وہاڑی واقعہ پر قائم کمیٹی کی انکوائری رپورٹ مکمل کرلی گئی جس کے مطابق  متوفی محمد مدثر کی موت کا کرونا ویکسین سے کوئی تعلق نظر نہیں آیا۔ انکوائری کمیٹی میں ڈی ایچ او (ایم ایس)'ڈی ایچ او (بقیہ نمبر29صفحہ6پر)

(پی ایس)،ڈپٹی ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر،ڈسٹرکٹ سپرٹینڈینٹ ویکسی نیشن اور ڈبلیو ایچ او کے نمائندے شامل تھے  انکوائری رپورٹ کے مندرجات  میں متوفی محمد مدثر کے والدین، 8 ہم جماعت، استاد، سکول ہیڈ ماسٹر اور ڈیوٹی پر موجود ویکسینیٹر  کے بیانات  شامل ہیں سیکرٹری پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ عمران سکندر بلوچ کی جاری کردہ  پریس ریلیز کے مطابق انکوئری میں واقعہ کے تمام پہلوؤں کو سامنے رکھا گیا ہے متوفی طالب علم کے بیرونی میڈیکل معائنے میں ویکسین کے ری ایکشن کی کوئی علامت سامنے نہیں آئی والدین کے پوسٹ مارٹم کی اجازت نہ دینے پر معاملہ شک و شبہات کا شکار ہوا۔ انہوں نے کہا کہ کمیٹی نے تمام عناصر کو سامنے رکھتے ہوئے رپورٹ پیش کی ہے۔ جس کے مطابق 29 ستمبر کو محمد مدثر سمیت  282  طالبعلموں کو فائزر ویکسین لگائی گئی تھی پرنسپل سکول کے مطابق ویکسین لگنے والے تمام طالب علم نارمل ہیں اور معمول کے مطابق سکول آرہے ہیں  جبکہ ٹیچر محمد حنیف کے مطابق محمد مدثر ویکسین لگوانے کے اگلے دن معمول کے مطابق سکول آیا۔متوفی نے اپنی دادی کیختم قل کے سلسلے میں سکول سے شارٹ  لیو لی۔  والد کے مطابق محمد مدثر سکول سے آ کر مکمل ہشاش  بشاش اور گھر کے کاموں میں حصہ لیتا رہا۔  ریسکیو عملے کے مطابقبے ہوشی کی حالت میں ملنے پر 1122 کے ذریعے  ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر   ہسپتال وہاڑی منتقل کیا گیااورڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال میں  ڈیوٹی پر موجود میڈیکل آفیسر نیای سی جی  کے بعد موت کی تصدیق کی۔ڈیوٹی پر موجود ڈسپنسر اور ویکسینیٹر کے مطابق ویکسین موزوں درجہ حرارت پر سٹور کی گئی تھی اورتمام طالبعلموں کو  فائزر ویکسین ڈبلیو ایچ او کے تفویض کردہ طریقہ کار کے مطابق لگائی گئی۔ نیزویکسی نیشن سے پہلے تمام طلبہ کی عمومی حالت صحت مند تھی۔ساتھی طلبہ کے بیان کے مطابق معمولی بخار اور ٹیکہ لگنے کی جگہ پر درد کے علاوہ ویکسین سے کوئی تکلیف نہیں ہوئی سیکرٹری عمران سکند ر بلوچ نے کہا کہ فائزر ویکسین عالمی ادارہ صحت سے منظور شدہ ہے اورمحفوظ ویکسین ہے۔ فائزر ویکسین 12 سال سے زائد عمر کے تمام افراد کے لئے مکمل طور پر محفوظ ہے۔قومی ادارہ برائے صحت اور نیشنل ڈرگ ریگولیٹری اتھارتی کی منظوری کے بعد ہی ویکسین عام عوام کومہیا کی جاتی ہے انہوں نے مزید کہا کہ عوام سے التماس ہے کہ کسی قسم کی افوہوں  پر کام نہ دھریں اور جلد از جلد ویکسین لگوائیں۔تمام دستیاب ویکسینز مکمل محفوظ ہیں۔

موثر

مزید :

ملتان صفحہ آخر -