چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان توہین عدالت کیس میں بچ گئے ، عدالت کا شوکاز نوٹس واپس لے لیا

چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان توہین عدالت کیس میں بچ گئے ، عدالت کا شوکاز نوٹس ...
چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان توہین عدالت کیس میں بچ گئے ، عدالت کا شوکاز نوٹس واپس لے لیا

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) خاتون جج کے خلاف توہین آمیز الفاظ پر توہین عدالت کے کیس میں چیئرمین پاکستان تحریک انصاف اور سابق وزیر اعظم عمران خان بچ گئے ، عدالت نے توہین عدالت کا نوٹس  ڈسچارج کرنے کا فیصلہ کرلیا۔

نجی ٹی وی جیو نیوز کے مطابق  اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیے کہ عمران خان کا بیان حلفی دیکھ لیا ،  بادی النظر میں یہ توہین عدالت تھی مگر عمران خان نے نیک نیتی ثابت کی اور خاتون جج سے معافی مانگنے گئے ،  ہم عمران خان کے کنڈیکٹ سے بھی مطمئن ہیں، یہ لارجر بینچ کا متفقہ فیصلہ ہے ۔ 

ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے اعتراض اٹھایا کہ عمران خان نے بیان حلفی میں معافی نہیں مانگی ، چیف جسٹس نے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ آپ ہم سے یہ توقع کرتے ہیں ہم نہال ہاشمی و دیگر کے کیسز والا سلوک کریں ؟، آپ کی سفارشات ہم اپنے تحریری فیصلے میں  لکھیں گے ، ہم توہین عدالت  کا نوٹس واپس لیتے ہوئے کارروائی کو ختم کر رہے ہیں ۔

خیال رہے کہ  سابق وزیر اعظم عمران خان نے گزشتہ سماعت پر عدالت میں کہا تھا کہ  اگر خاتون جج کو تکلیف پہنچی ہے توذاتی حیثیت میں معافی مانگنے کیلئے بھی تیار ہوں۔  گزشتہ سماعت پر عدالت کی جانب سے عمران خان کے معافی کے بیان کو عدالت نے تسلی بخش قرار دیا تھا۔

گزشتہ  سماعت جب شروع ہوئی تو عمران خان کے وکیل نے عدالت سے استدعا کی کہ عمران خان کچھ کہنا چاہتے ہیں جس پر عمران خان روسٹرم پر آئے اور کہا کہ ” میری 26 سال کی کوشش رول آف لاء کی ہے،  میرے سواء جلسوں میں رول آف لاء کی کوئی بات نہیں کرتا ،  میں  یقین دلاتاہوں آئندہ کبھی بھی ایسا عمل نہیں ہو گا  ، میری  کبھی بھی عدلیہ کے جذبات کو ٹھیس پہنچانے کی نیت نہیں تھی ، اگر خاتون جج کو تکلیف پہنچی ہے توذاتی حیثیت میں معافی مانگنے کیلئے بھی تیار ہوں ، جو میں نے کہا جان بوجھ کر نہیں کہا “۔

بعد ازاں  عمران خان  اپنے  وکیل کے ہمراہ ایڈیشنل سیشن جج زیبا چودھری کی عدالت پہنچے، جہاں جا کر  معلوم ہوا کہ خاتون جج زیبا چودھری کمرہ عدالت میں موجود نہیں  ہیں وہ رخصت پر ہیں ، عمران خان نے ریڈر سے مخاطب ہو کر کہا کہ آپ نے جج صاحبہ کو بتانا ہے کہ عمران خان آیا تھا اور ان سے معذرت کرنا چاہتا ہوں ۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -