کنٹرول لائن کو دوبارہ سیز فائر لائن بنائیں

    کنٹرول لائن کو دوبارہ سیز فائر لائن بنائیں

مکرمی!وزیر اعظم سے اپیل ہے ۔ فوری طور پر ;767967; کو 1948ء سے 1972ء تک والی ;67;ease ;70;ire ;76;ine میں تبدیل کر دیا جائے ۔ کیونکہ انڈیا نے شملہ معاہدہ کی شرائط کو بھی پورا نہیں کیا اور وہ ہم سے بات چیت کرنے کو تیار نہیں شملہ معاہدہ 100% ہمارے حق کے خلاف تھا تو پھر یہ مسئلہ کس طرح حل ہوگا ۔ یہ کام تو 5 اگست 2019ء کے فوراً بعد ہو جانا چاہئے تھا ۔ ہماری افواج کسی بھی وقت اس سیز فائر لائن (;677076;)کو کراس کر سکتی ہیں ۔ جہاں انڈیا نے دیوار کھڑی کر دی ہے اور جس کے اوپر بجلی کی تاریں لگا دی ہیں ۔ پھر پوری دنیا ہ میں اس لائن کو کراس کرنے سے نہیں روک سکے گی ۔ کیونکہ جنگ بندی لائن کی وجہ سے مقبوضہ کشمیر دوبارہ مکمل طور پر متنازعہ علاقہ ڈکلیئر ہو جائے گا ۔ مذاکرات سے یہ مسئلہ کبھی حل نہیں ہوگا سوائے جہاد کے ۔ ایک سچا مسلمان جب جہاد کے لئے اللہ کی راہ میں نکلتا ہے تو پھر موت اس کی زندگی کی حفاظت کرتی ہے ۔

اقوام متحدہ نے مودی حکومت کے ظلم و وحشت (;71;enoside) کے خلاف ایک معمولی سی قرارداد بھی انڈیا کے خلاف پاس نہیں کی ۔ پوری دنیا میں ہمارے دکھوں کا احساس کرنے والا کوئی نہیں سوائے ترکی کے صدر جناب طیب اردوان کے ۔۔۔ پہلے سعودی عرب اور اب ;856569; اور بحرین کے حکمرانوں نے مودی کو سب سے بڑے سول ایوارڈ سے نوازا ہے اور اس کے درندگی کے اقدامات کی تعریف کی ہے ۔ سید علی گیلانی کے بقول ان سب ظالم حکمرانوں کو قیامت کے بعد اپنے اللہ کے سامنے اس بدترین فعل کا جواب دینا پڑے گا ۔ ان کے مقابلے میں اس صدی کے اسلامی دنیا کے دو عظیم لیڈر شاہ فیصل;231; مرحوم اور صدر محمد صیالحق;231; مرحوم ہوئے ہیں جو پوری دنیا میں جہاں کہیں بھی مسلمان دکھ اور پریشانی میں مبتلا ہوتے تھے تو وہ فوراً ان کی مدد کو پہنچ جاتے تھے انہوں نے اپنی زندگی میں بادشاہی میں فقیری اختیار کی ہوئی تھی اور دونوں شہید کر دیئے گئے شملہ معاہدہ 1972ء میں جنگ بندی لائن کو ;767967; مان کرغلطی کی گئی یہ اس وقت کے وزیر اعظم بھٹو کی نا اہلی تھی جس کے بعد یہ مسئلہ دو طرفہ مذاکرات کے ذریعے حل کرنے پر آمادگی ظاہر کی گئی ۔

اب 27 ستمبر کو ہمارے وزیر اعظم جنرل اسمبلی میں خطاب کرنے کے لئے ;857879; میں جا رہے ہیں انہیں ;767967; کو ;67;ease ;70;ire ;76;ine میں تبدیل کرنے کا ;78;otification کر کے جانا چاہئے اور وہاں پر انڈونیشیا میں مشرقی تیمور کی عیسائی ریاست اور سوڈان میں بھی ایک اور عیسائی ریاست کا بھرپور ذکر کرنا چاہئے کہ کس طرح بڑی طاقتوں نے وہاں پر دنوں میں رائے شماری کروا کر دو چھوٹی چھوٹی آزاد ریاستیں قائم کر دیں جن کا مذہب ان سے ملتا تھا ۔ اور کشمیر میں چونکہ 98 فیصد مسلمان ہیں وہاں 72 سال گزرنے کے باوجود رائے شماری کی نوبت نہیں آنے دی ۔ جناب وزیر اعظم آپ سے اپیل ہے کہ آپ نہرو کے ساتھ معاہدہ اور انڈونیشیا میں مشرقی تیمور اور سوڈان میں ایک اور عیسائی ریاست قائم کرنے پر بھرپور طریقے سے ;857879; کی جنرل اسمبلی میں اظہار خیال فرمائیں ۔ شاید ساری دنیا کو ذرا سی بھی شرم آ جائے اور ان کا مردہ ضمیر جاگ جائے ۔ ;797367; کی اب تک کی کارکردگی بالکل صفر ہے ۔ ( محمد یونس مغل،18;4772;-1 ویلنشیا ٹاءون، لاہور)

مزید : رائے /اداریہ


loading...