دکاندار سے فراڈ‘ نوجوان کی دلبرداشتہ  ہوکر خود کشی‘ تحقیقات شروع

   دکاندار سے فراڈ‘ نوجوان کی دلبرداشتہ  ہوکر خود کشی‘ تحقیقات شروع

  

 صادق آباد(نامہ نگار) تھانہ سٹی صادق آباد میں مقدمہ درج کرواتے ہوئے گزشتہ روز خود کشی کرنے والے وقار (بقیہ نمبر52صفحہ 6پر)

کے والد بدر منیر نے موقف اختیار کیا کہ اس کے بیٹے وقار نے البدر چائنہ موبائل شاپ کے نام سے دکان بنا رکھی تھی تقریبا 3سے 4روز قبل اشفاق الیکٹرونکس والے اشفاق،طاہر زمان چیمہ (ایچ بی ایل)،عمران زرگر (ایچ بی ایل) تین سے چار نا معلوم افراد کے ہمراہ ہمارے گھر آئے اور میرے بیٹے محمد وقار کو پوچھنے لگے جو کہ اس وقت گھر پر موجود نہ تھا،جنہوں نے کہاکہ تمہارے بیٹے نے ہم سے پیسے لئے ہوئے ہیں جو کہ ہمیں واپس نہیں کررہاہے،اگر ہمارے پیسے نہ دیئے تو ہم اسے قتل کر دیں یا اس کے بچوں کو اٹھا کر لے جائیں گے جس کے بعد وہ دھمکیاں دیتے ہوئے چلے گئے۔جب میرا بیٹا محمد وقار گھر واپس آیا تو میں نے اور شبیر حسین،شہزاد نے محمد وقار سے پوچھا تو میرے بیٹے نے بتایا کہ اشفاق،طاہر اور عمران شہباز زرگر دیگر چار افراد میری آئی ڈی ہیک کر کے اور میری ڈیوائسز استعمال کر کے دھوکہ دیتے ہوئے مجھے 20لاکھ روپے کا بلاوجہ مقروض کردیا ہے جب کہ میرا ان سے کوئی لین دین بقایا نہ ہے۔جس کی وجہ سے میں بہت زیادہ پریشان ہو اور اپنی زندگی سے تنگ آچکا ہوں ایسی زندگی سے مجھے موت بہتر ہے،گزشتہ روز یکم ستمبر 4.45بجے رحمان ٹاؤن میں موجود تھا کہ پتا چلا کہ میرا بیٹا وقار مین روڈ پر ٹاؤن کے گیٹ کے سامنے زہر کھا کر بے ہوش پڑا ہے جب میں وہاں پہنچا  تو دیکھا میرا بیٹا محمد وقار بے ہوش پڑا تھا ریسکیو 1122کے اہلکاروں نے ٹی ایچ کیو ہسپتال منتقل کردیا جہاں وہ اپنی جان کی بازی ہار گیا۔میرے بیٹے کی موت اشفاق،طاہر،زمان چیمہ،عمران شہباز زرگر وغیرہ کی وجہ سے ہوئی ہے جس پر پولیس نے ملزمان کے خلاف دفعہ 322کے تحت مقدمہ درج کرکے انکوائری شروع کردی ہے۔

تحقیقات

مزید :

ملتان صفحہ آخر -