فاٹا انضمام سمیت ترمیمی بل پر نظر ثانی کی جائے،مہمند قبائل

فاٹا انضمام سمیت ترمیمی بل پر نظر ثانی کی جائے،مہمند قبائل

  

پشاور (سٹی رپورٹر)ضلع مہمند کے عمائدین نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ فاٹا انضمام کے بعد ضم شدہ اضلاع میں پیدا ہونیوالے بحران سے نمٹنے کیلئے عملی اقدامات اٹھائے جائے اور فاٹا انضمام سمیت فاٹا ترمیمی بل  پر نظر ثانی کی جائے بصورت دیگر اپنے حقوق کے حصول کیلئے تحریک کا اغاز کرینگے پشاور پریس کلب میں مہند قوم کے عمائدین  ملکندیر منان،ملک منظور موسا خیل،ملک نصرت ترکزئی،ملک احمد خویزے اور ملک سلطان نے دیگر مشران کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ فاٹا انضمام کے وقت قبائلیوں کے ساتھ جو وعدے کے تھے اس پر کوئی عمل درامد نہیں ہو رہا جبکہ اقتصادی بہتری کے وعدے بھی سست راوی کا شکار ہے جسکی وجہ سے قبائلی عوام میں احساس مھرومی پائی جاتی ہے جبکہ نام نہاد نظام انصاف کے باعث مزید تنہائی محسوس کرنے لگے۔مہمند قوم کے عمائدین نے کہا کہ اصلاحاتی کمیٹی کے تجویز کے خلاف پان سال پہلے انضمام کر کے قبائلی مشران کے مراعات اور سہولیات واپس لیکر ان کی علاقائی اور اجتماعی زمہ داری سے بے دخل کر کے علاقائی مسائل اور تنازعات مزید بڑھ گئے جبکہ قوانین سے عدم وقفیت  کی بناء پر لوگ آئے روز جرائم کے مرتکب اور پیچیدہ انتظامی مسائل کا شکار ہو رہے ہیں جسکی وجہ سے حکومت اور عوام میں فاصلے اور لا تعلقی میں ضافہ ہوا ہے مہمند قوم کے مشران نے کہا کہ قبائلی علاقوں میں اے ڈٰ ایف فنڈ ختم کرنے سے پولیٹیکل انتظامیہ کے ذریعے چلنے والے گورنرز ماڈل سکول بند ہو نے کے قریب ہے جبکہ ہزاروں مستحقین کے ماہانہ امداد بھی ختم ہو چکی ہے جسکی وجہ سے لوگ انضمام لانے والوں کو بد دعائیں دینے لگے جبکہ انضمام کے وقت این ایف سی ایور ڈ میں بھی مناسب فنڈز نہیں دئے گئے تاہم پہلے سے جاری فنڈزبھی رک گئی جسکی باعث قبائلی طلبہ کا مستبل داو پر ہے اور  متاثرین کی آباد کاری اور بحالی بھی متاثر ہوئی ہے انہوں نے کہا کہ انضمام  کے وو سال بعد لویز اور خاصہ دار ختم کر کے پولیس نظام لانے سے جرائم میں کمی کے بجائے اضافہ ہوا ہے جبکہ محکمہ جات کو اضافی فنڈز  نہیں ملے جبکہ پہلے سے ملنے والے فنڈز میں کٹوتیوں اور تاخیر سے ادائیگی  کا سامنا بھی کرنا پڑھ رہا ہے جبکہ ضم شدہ اضلاع میں ترقیاتی کام بھی نہیں ہو رہے جسکی وجہ سے علاقہ میں پسماندگی بڑھنے لگی اور قبائی عوام کی قربانیاں ضائع ہوتی نطر ارہی ہے جو حکومت کی ناکامی کا ثبوت ہے مہمند قوم کے مشران نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ قبائلیوں کے الگ تشخص کو برقرار رکھنے کیلئے جرگی نطام کو مظبو ط بنائے جبکہ ضم شدہ قبائلی اضلاع کی محرومیاں  اور پسماندگی ختم کرنے کیلئے فاٹا ترمیم بل اور فاٹا انضمام پر نظر ثانی کریں قبائلی عوام کے مراعات پرانے طریقے سے بحال کیے جائے بصورت دیگر قبائلی جرگوں ذریعے فیصلہ کن تحریک کا اغاز کیا جائے گا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -