مکلی (شہرِ خموشاں سے ایک مکالمہ)۔۔۔فواد حسن فواد

مکلی (شہرِ خموشاں سے ایک مکالمہ)۔۔۔فواد حسن فواد
مکلی (شہرِ خموشاں سے ایک مکالمہ)۔۔۔فواد حسن فواد

  

                                                                                                                                                      مکلی

                                                                                                                     (شہرِ خموشاں سے ایک مکالمہ)

کبھی دریایہاں سے چند قدموں کی مسافت تھا

جہاں حدِ نظر قبریں دکھائی دے رہی ہیں 

بہت سے ان کہے قصے 

بہت سی ان کہی باتیں

بکھرتی جالیوں کے روزنوں سے

سرکتی آ رہی ہیں

اور سنائی دے  رہی ہیں

کبھی تاریخ لکھی جا رہی تھی

تو لفظوں نے گواہی دی

 کہ الفت اور محبت کی بہت سی داستانیں

ان مزاروں میں بھی کندہ ہیں

کئی قصے عداوت کے

کئی لمحے بغاوت کے 

یہاں دیوار و در اور سیڑھیوں پر

چاپ دیتے تھے

ہمیشہ کی طرح لیکن

کوئی حاکم، کوئی سالار جب ان کو

منوں مٹی کے نیچے دفن کرکے

اپنے استبداد کی اک داستاں لکھتا

جنوں کو جرم کہتا

اور محبت رائیگاں لکتا

تو بے چہرہ مؤرخ 

پھر اسے تاریخ کر دیتا

میں صدیوں کی مسافت پر کھڑا

دھند ہوتی ساعتوں کو دیکھتا ہوں

سوچتا ہوں

مری تاریخ بھی شاید کسی ایسے مؤرخ نے لکھی ہے

جنہیں مصلوب ہونا تھا

وہ تختِ تمکنت پر ایستادہ ہیں

جنہیں اذنِ حکومت تھا

وہ ڈحلتی رات کے پچھلے پہرمیں

فنا کے شہر کو رُخصت ہوئے ایسے

کہ رُخصت کرنے والوں میں

کوئی چہرہ شناسا بھی نہیں تھا

نہ جانیں کیوں مری آنکھیں

زمانےکی حدوں سے ماورا

اِک اور منظر دیکھتی ہیں

میرے جیسا کوئی بھٹکا مسافر

شہرِ جاناں کے

کسی ایسے ہی آثارِ قدیمہ پر کھڑا مسافر

سوچتا ہے

جہاں حدِ نظر قبریں دکھائی دے رہی ہیں

کبھی دریا یہاں سے چند قدموں کی مسافت تھا

شاعر: فواد حسن فواد

Kabhi darya Yahaan Say Chand Qadmon Ki Musaafat Tha

jahaan Had  e  Nazar Qabren Dikhaai Day rahi Hen

Bahut Say Ankahay Qissay

Bahut Si An  Kahi Baaten

Bikharti Jaaliun K Roznon Say

Sirakti Aa rahi Hen

Aor Sunaai Day Rahi Hen

Kabhi Tareekh Likhi Jaa Rahi Thi

To Lafzon Nay Gawaahi Di

Keh Ulfat Aor Muhabbat Ki Bahut Si Daastanen

In Mazaaron Men Bhi Kunnda Hen

Kai Qissay Adaawat K 

kai Lamhay Baghaawat K

YahaaN Dewaar  o  Dar Aor Seerrhiun Par

Chaap Detay Thay

Hamesha Ki Tarah Lekin

Koi Haakim, Koi Salaar JAb Un Ko

Manon Matti K Neechay Dafn Kar K

Apnay Istabdaad Ki Ik Daastaan Likhta

Junun Ko Jurm Likhta

Aor Muhabbat Raaogaan Likhta

To Bechehra Muarrikh

Phi rUsay Tareekh Kar Detay

main Sadiun Ki Musaafat par Kharra

Dunnd Hoti Saaton Ko Dekhta Hun

Sochta Hun

Miri Tareekh Bhi Shaayad Kisi Aisay Muarrikh nay Likhi Hay

Jinhen Masloob Hona Tha

Wo Takht  e  Tamaknat Par Estaada Hen

Jinhen Ezn  e  Hukoomat Tha

Wo Dhalti Raat K Pichlay Pahar Men

Fana K Shehr Ko Rukhsat Huay Aisay

Keh Rukhsat Karnay Saalon Men 

Koi Chehra Shanaasa Bhi Nahen Tha

Na ajanen Kiun Miri Aankhen 

Zamaanay Ki Hadon Say Maawra

Ik Aor Manzar Dekhti Hen

Meray Jaisa Koi Bhatka Musaafir

Shehr  e  Jaana K

Kisi  Aisay 

Hi Asaar  e  Qadeema Par Kharra Hay

Sochta Hun

Jahaan had  e  Nazar Qabren Dikhaai day Rahi Hen

Kabhi Darya yahaan Say Chand Qadmon Ki  Musaafat Tha

Poet: Fawad Hasan Fawad

 ٹھٹھہ سندھ میں و اقع مکلی دنیا کا سب سے بڑا قبرستان ہے۔ کسی دور میں یہ اس سارے خطے میں تعلیم و تربیت و علم ک سائنس سب سے بڑا مرکز تھا جہاں پہ اس دور کے سائنس، آرٹس و ثقافت کے بہترین و مشہور تحقیقی ادارے موجود تھے۔ آج یہ اس دور کے کچھ حکمران طبقے کے قبرستان کی حالت میں موجود ہےجس پہ سونے سے کندہ کاری و خطاطی موجود ہے۔ یہ تاریخ کا دکھ بڑا سبق ہے جو ہم نے کبھی نہیں سیکھا نہ ہی آن ہم سیکھ رہے ہیں۔

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -