نئی خواہش رچائی جا رہی ہے

نئی خواہش رچائی جا رہی ہے
نئی خواہش رچائی جا رہی ہے

  

نئی خواہش رچائی جا رہی ہے

تیری فرقت منائی جا رہی ہے

نبھائی تھی نہ ہم نے جانے کس سے

کہ اب سب سے نبھائی جا رہی ہے

ہمارے دل محلے کی گلی سے

پماری لاش لائی جا رہی ہے

کہاں لذت وہ سوزِ جستجو کی

یہاں ہر  چیز  پائی جا رہی ہے

خوشا احوال اپنی زندگی کا

سلیقے سے گنوائی جا رہی ہے

دریچوں سے تھا اپنے بیر ہم کو

سو خود دیمک لگائی جا رہی ہے

جدئی موسموں کی دھوپ سنیو

مری کیاری جلائی جارہی ہے

مری جان اب یہ صورت ہے کہ مجھ سے

تری عادت چھڑائی جارہی ہے

شاعر: جون ایلیا

Nai Khaahish Rachaai Ja Rahi Hay

Tiri Furqat Manaai Ja Rahi Hay

Nibhaaai Thi Na ham Nay Jaanay Kiss Say

Keh Ab Sab Say Nibhaai Ja Rahi Hay

Hamaaray Dil Muhallay Ki gali Say

Hamaari laash Laai Ja Rahi Hay

KahaN Lazzat WO Soz  e  Justaju Ki

Yahaan har Cheez Paai Ja Rahi Hay

Khosha Ahwaal Apni Zindagi Ka

Saleeqay Say Ganwaai  Ja Rahi Hay

Dareechon Say Tha Apnay Bair Ham Ko

So Khud Deemak Lagaai Ja Rahi Hay

Judaai Maosmon Ki Dhoop Sunyo

Miri Kayaari Jalaai Ja Rahi Hay

Miri Jaan Ab Yeh Soorat Hay Keh Mujh Say

 Tiri Aadat Churaai Ja Rahi Hay

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -