اب کسی سے مرا حساب نہیں

اب کسی سے مرا حساب نہیں
اب کسی سے مرا حساب نہیں

  

اب کسی سے مرا حساب نہیں

میری آنکھوں میں کوئی خواب نہیں

خون کے گھونٹ پی رہا ہوں میں

یہ مرا خون ہے شراب نہیں

میں سرابی ہوں میری آس نہ چھین

تو مری آس ہے سراب نہیں

نوچ پھینکے لبوں سے میں نے سوال

طاقتِ شوخیِ جواب نہیں

اب تو پنجاب بھی نہیں پنجاب

اور خود جیسا اب دوآب نہیں

غم ابد کا نہیں ہے آن کا ہے

اور اس کا کوئی حساب نہیں

بودش اک رَو ہے ایک رَو یعنی

اس کی فطرت میں انقلاب نہیں

شاعر: جون ایلیا

Ab Kisi Say Mira Hisaab Nahen

Meri Aankhon Men Ko khaab Nahen

Khoon K Ghoont Pi Raha Hun Main

Yeh Mira Khoon Hay Sharaab Nahen

Main Saraabi Hun Meri Aas Na Chheen

Tu Miri Aas Hay Saraab Nahen

Voch Phainkay Labon Say Main Nay Sawaal

Taaqat  e  Sokhi  e  Jawaab Nahen

Ab To Panjaab Bhi NAhen Punjaab

Aor Khud Jaisa Ab Do Aab Nahen

Gham Abad Ka Nahen Hay Aan Ka Hay

Aor Iss Ka Koi Hisaab Nahen

Bood Ik Rao Hay, Aik Rao Yaani

Iss Ki Fitrat Men Inqalaab Nahen

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -