سب چلے جاؤ ,مجھ میں تاب نہیں

سب چلے جاؤ ,مجھ میں تاب نہیں
سب چلے جاؤ ,مجھ میں تاب نہیں

  

سب چلے جاؤ ,مجھ میں تاب نہیں

نام کو بھی اب اِضطراب نہیں

خون کر دوں تیرے شباب کا میں

مجھ سا قاتل تیرا شباب نہیں

اِک کتابِ وجود ہے تو صحیح

شاید اُس میں دُعا  کا  باب نہیں

تو جو پڑھتا ہے بو علی کی کتاب

کیا یہ عالم کوئی کتاب نہیں

بھول جانا نہیں گناہ اُسے

یاد کرنا اُسے ثواب نہیں

پڑھ لیا اُس کی یاد کا نسخہ

اُس میں شہرت کا کوئی باب نہیں

شاعر: جون ایلیا

Sab Chalay Jaao , Mujh Men Taab Nahen

Naam Ko Bhi Ab Iztaraab Nahen

Khoon Kar Dun Tiray Shabaab Ka Main

Mujh Sa Qaatil Tira Shabaab Nahen

Ik Kitaab  e Wajood Hay To Sahi

Shaayad Uss Men Dua K aBaab Nahen

Tu Jo Parrhta Hay BuALI Ki Kitaab

Kia Yeh Aalam Koi  Kitaab Nahen

Apni Manzill Nahen Koi faryaad

Rukhsh Bhi Apna Bad Rakaab Nahen

Ham Kitabi Sadaa K Hen Kekin

Hasb  e  Mansha Koi Kitaab Nahen

Bhool Jaan nahen Gunaah Usay

Yaad Karna Usay Sawaab Nahen

Parrh Lia Uss Ki  Yaad Ka Nuskha

Uss Men Shohrat Ka Koi Baab Nahen

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -غمگین شاعری -