وہ جو کیا کچھ نہ کرنے والے تھے

وہ جو کیا کچھ نہ کرنے والے تھے
وہ جو کیا کچھ نہ کرنے والے تھے

  

وہ جو کیا کچھ نہ کرنے والے تھے

بس کوئی دم میں بھرنے والے تھے

تھے گلے اور گرد باد  کی شام

اور ہم سب بکھرنے والے تھے

وہ جو آتا تو اس کی خوشبو میں

آج ہم رنگ بھرنے والے تھے

صرف افسوس ہے یہ طنز نہیں

تم نہ سنورے ، سنورنے والے تھے

یوں تو مرنا ہے ایک بار مگر

ہم کئی بار مرنے والے تھے

شاعر: جون ایلیا

Wo Jo Kia Kuch Na KArnay Waalay Thay

Bass Koi Dam Men Marnay Waalay Thay

Thay Gilay, Aor Gard Baad Ki Shaam

Aor Ham Sab Bikharnay Waalay Thay

Wo Jo Aata To Uss Ki Khushbu Men

Aaj Ham  Rang Bharnay Waalay Thay

Sirf Afsos Hay Yeh Tanz Nahen

Tum Na Sanwray, Sanwarnay Waalay Thaya

Yun To Marna Hay Aik Baar Magar

Ham Kai Bar Marnay Waalay Thaya

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -