وہ جو تھا وہ کبھی ملا ہی نہیں

وہ جو تھا وہ کبھی ملا ہی نہیں
وہ جو تھا وہ کبھی ملا ہی نہیں

  

وہ جو تھا وہ کبھی ملا ہی نہیں

سو  گریباں کبھی سلا ہی نہیں

اس سے ہر دم معاملہ ہے مگر

درمیاں کوئی سلسلہ ہی نہیں

بے ملے ہی بچھڑ گئے ہم تو

سو گلے ہیں کوئی گلہ ہی نہیں

چشم میگوں سے ہے مغاں نے کہا

مست کر دے مگر پلا ہی نہیں

تو جو ہے جان تو جو ہے جاناں

تو ہمیں آج تک ملا ہی نہیں

مست ہوں میں مہک سے اس گل کی

جو کسی باغ میں کھلا ہی نہیں

ہائے جونؔ اس کا وہ پیالۂ ناف

جام ایسا کوئی ملا ہی نہیں

تو ہے اک عمر سے فغاں پیشہ

ابھی سینہ ترا چھلا ہی نہیں؟

شاعر: جون ایلیا

W Jo Tha Wo KAbhi Mila Hi Nahen

So Girebaan Kabhi Sila  Hi Nahen

Uss Say Har Dam Muaamla Hay Magar

Darmyaan Koi Silsla Hi Nahen

Be Milay Hi Bichharr gaey Ham To

Sao Gilay Hen Koi Gilaa Hi Nahen

 Chashm  e  Megon Say  Hay Maghaan  Nay Kaha

Mast kar Day Magar Pilaa Hi Nahen

Tu JoHay Jaan, Tu Jo Hay jaana

Tu HamenAaj Tak Mila Hi Nahen

Mast Hun Main Mahak Say  Uss Gull Ki

Jo Kisi Baagh Men Khila Hi Nahen

Haaey JAUN Uss Ka Wo Payaala  e  Naaf

Jaam Aisa Koi Mila Hi Nahen

Tu Hay Ik Umr Say Fughaan Paisha

Abhi Seena Tera Chhila Hi Nahen

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -