یاد اُسے انتہائی کرتے ہیں

یاد اُسے انتہائی کرتے ہیں
یاد اُسے انتہائی کرتے ہیں

  

یاد اُسے انتہائی کرتے ہیں

سو ہم اس کی بُرائی کرتے ہیں

پسند آتا ہے دِل سے یوسف کو

وہ جو یوسف کے بھائی کرتے ہیں

ہے بدن خوابِ وصل کا دنگل

آؤ  زور آزمائی کرتے ہیں

اُس کو اور غیر کو خبر ہی نہیں

ہم لگائی بجھائی کرتے ہیں

ہم عجب ہیں کہ اُس کی بانہوں میں

شکوۂ نارسائی کرتے ہیں

حالتِ وصل میں بھی ہم دونوں

لمحہ لمحہ جدائی کرتے ہیں

آپ جو میری جاں ہیں، میں دل ہوں

مجھ سے کیسے جدائی کرتے ہیں

با وفا ایک دوسرے سے میاں

ہر نفس بے وفائی کرتے ہیں

جو ہیں سرحد کے پار سے آئے

وہ بہت خود ستائی کرتے ہیں

پَل قیامت کے سود خوار ہیں جون

یہ ابد کی کمائی کرتے ہیں​

شاعر: جون ایلیا

Yaad Usay Intehaai Kartay Hen

So Ham Uss ki Buraai Kartay Hen

Pasand Aat Hay Dil Say YOUSAF Ko

Wo JoYOUSAF K Bhaai Kartay Hen

Hay Badan  khaab  e   Wasl Ka Dangal

Aao Zor Aazmaai Kartay Hen

Uss Ko Aor Ghair Ko Khabar Hi Nahen

Ham Lagaai Bujhaai Kartay Hen

Ham Ajab Hen Keh Uss Ki Baahon Men

Shikwaa e  Narasaai Kartay Hen

Haalat  e  Wasl Men Bhi Ham Dono

Lamha Lamha Judaai Kartay Hen

Aap Jo Meri Jaan Hen, Main Dil Men

Mujh Say Kaisay Judaai  Kartay Hen

Bawafaa Aik DOosray Say Miaan

Har  Nafas Bewafaai Kartay Hen

Jo Hen Sarhad K Paar Say Aaey

Wo Bahut Khud Sataai Kartay Hen

Pall Qayaamat K Sood Khaar Hen JAUN

Yeh Abad Ki Kamaai Kartay Hen

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -