یاد آئے گی اب تری کب تک

یاد آئے گی اب تری کب تک
یاد آئے گی اب تری کب تک

  

خون تھوکے گی زندگی کب تک

یاد آئے گی اب تری کب تک

جانے والوں سے پوچھنا یہ صبا

رہے آباد دل گلی کب تک

ہو کبھی تو شرابِ وصل نصیب

پیے جاؤں میں خون ہی کب تک

دل نے جو عمر بھر کمائی ہے

وہ دُکھن دل سے جائے گی کب تک

جس میں تھا سوزِ آرزو اس کا

شبِ غم وہ ہوا چلی کب تک

بنی آدم کی زندگی ہے عذاب

یہ خدا کو رُلائے گی کب تک

حادثہ زندگی ہے آدم کی

ساتھ دے گی بَھلا خوشی کب تک

ہے جہنم جو یاد اب اس کی

وہ بہشتِ وجود تھی کب تک

وہ صبا اس کے بِن جو آئی تھی

وہ اُسے پوچھتی رہی کب تک

میر جونی! ذرا بتائیں تو

خود میں ٹھیریں گے آپ ہی کب تک

حالِ صحنِ وجود ٹھیرے گا

تیرا ہنگامِ رُخصتی کب تک

شاعر: جون ایلیا

Khoon Thukay Gi Zindagi Kab Tak

Yaad Aaey Gi Ab Tiri Kab Tak

Jaanay Waalon Say Yeh Poochna Saba

Rahay Gi aabaad Dil Gali Kab Tak

Ho KAbhi To Sharaab  e  Wasl Naseeb

Piay jaaun Main Khoon Hi Kab Tak

Dil Nay Jo Umr Bhar Kamaai Hay

Wo Dukhan Dil Sau jaaey Gi kab Tak

Jiss Men Main Tha Soz  e  Aarzu Uss Ka

Shab  e  Gham Wo Hawaa Chali  Kab Tak

Bani Aadam Ki Zindagi Hay Azaab

Yeh Khuda Ko Rulaaey Gi  Kab Tak

Haadsa Zindagi hay Aadam Ki

Saath Day Gi Bhala Khushi Kab Tak

Hay Jahannam Jo Yaaad Ab Uss Ki

Wo Bahisht  e  Wajood Thi Kab Tak

Wo Sabaa Uss K Bin Jo Aaee thi

Wo Usay Poochti Rahi Kab Tak

Meer Jaoni!Zaraa Bataaen To

Khud Men Thehren Gay Aap Hi Kab Tak

Haal Sehn  e  Wajood Thehray Ga

Tera hangaam  e  Rukhsati Kab Tak

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -