دل سے ہے بہت گریز پا تو

دل سے ہے بہت گریز پا تو
دل سے ہے بہت گریز پا تو

  

دل سے ہے بہت گریز پا تو

تُو کون ہے اور ہے بھی کیا تو

کیوں مجھ میں گنوا رہا ہے خود کو

مجھ ایسے یہاں ہزار ہا تو

ہے تیری جدائی اور میں ہوں

ملتے ہی کہیں بچھڑ گیا تو

پوچھے جو تجھے کوئی ذرا بھی

جب میں نہ رہوں تو دیکھنا تو

اک سانس ہی بس لیا ہے میں نے

تو سانس نہ تھا سو کیا ہوا تو

ہے کون جو تیرا دھیان رکھے

باہر مرے بس کہیں نہ جا تو

شاعر: جون ایلیا

Dil Say Hay bahut Guraiz Paa Tu

Tu KonHay Aor Hay Bhi Kia Tu

Kiun Mujh Men Ganwa Rah Hay Khud  Ko

Mujh Aisay YahaN Hazaar Haa Tu

Hay Teri Judaai Aor Main 

Miltay Hi Kahen Bichhar Gia Tu

Poochhay Jo Tujhay Koi Zara Bhi

Jab Main Na Rahun To Dekhna Tu

Ik Saans Hi Bass  Lia Hay Main Nay

To Saans Na Tha So Kia Hua Tu

hay Kon Jo Tera Dhayaan Rakhay

Baahar Miray Bass Kahen Na Jaa Tu

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -