ذات اپنی گواہ کی جائے

ذات اپنی گواہ کی جائے
ذات اپنی گواہ کی جائے

  

ذات اپنی گواہ کی جائے

بند آنکھوں نگاہ کی جائے

ہم تو بس اپنی چاہ میں ہیں مگن

کچھ تو اس کی بھی چاہ کی جائے

ایک ناٹک ہے زندگی جس میں

آہ کی جائے، واہ کی جائے

دل! ہے اس میں ترا بَھلا کہ تری

مملکت بے سپاہ کی جائے

ملکہ جو بھی اپنے دل کی نہ ہو

جونؔ ! وہ بے کلاہ کی جائے

شاعر: جون ایلیا

Zaat Apni Gawaah Ki Jaaey

Band Aankhon Nigaah Ki Jaaey

Ham To BassApni Chaah Men Hen Magan

Kuch To Uss Ki Bhi Chaah Ki Jaaey

Aik Naatak Hay Zindagi Jiss Men

Aah Ki Jaaey, Waah Ki Jaaey

Dil! hay Iss Men Tira Bhala Keh Tiri

Mamlokat  Be Sipaah Ki Jaaey

Malka Jo Bhi Apnay Dil Ki Na  Ho

JAUN! Wo Be Kulaah Ki Jaaey

Poet:Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -