’کورونا وائرس اتنا ہی خطرناک ہے جتنا باتھ روم میں نہانا‘ شماریات کے ماہر نے حیران کن دعویٰ کردیا

’کورونا وائرس اتنا ہی خطرناک ہے جتنا باتھ روم میں نہانا‘ شماریات کے ماہر نے ...
’کورونا وائرس اتنا ہی خطرناک ہے جتنا باتھ روم میں نہانا‘ شماریات کے ماہر نے حیران کن دعویٰ کردیا

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) اس میں کوئی شک نہیں کہ کورونا وائرس اس صدی کی دو بڑی وباﺅں میں سے ایک ہے جو ایسی تباہ کن ثابت ہوئی کہ لاکھوں جانیں نگل گئی۔ بلاشبہ اب بھی لوگوں کو اس موذی وباءکے حوالے سے ہر احتیاط برتنی چاہیے کیونکہ اس سے ضائع ہونے والی ایک جان کا بھی نعم البدل ممکن نہیں تاہم اس وباءکے باعث جس قدر دنیا میں خوف و ہراس پھیلا، وہ کس قدر صحیح تھا؟ اب ایک برطانوی ماہر شماریات نے اس وباءکے اعدادوشمار کو ایک اور زاوئیے سے دنیا کے سامنے رکھا ہے جس سے لگتا ہے کہ اس وباءپر دنیا میں اٹھنے والا غلغلہ کچھ بے سبب بھی تھا کہ اس سے بچاﺅ کے ضروری اقدامات تو کیے جاتے مگر اعدادوشمار کو ایک رخ دے کر جس طرح دنیا کو خوف میں مبتلا کیا گیا، وہ درست نہیں تھا۔ ٹم ہرفورڈ نامی اس برطانوی ماہرکا کہنا ہے کہ ”حقیقت میں کورونا وائرس اتنا ہی خطرناک ہے جتنا کہ باتھ روم میں نہانا۔“ میل آن لائن کے لیے لکھے گئے اپنے آرٹیکل میں ٹم ہرفورڈ نے کہا ہے کہ اگر آج بھی آپ کو کوئی کہے کہ کورونا وائرس خطرناک نہیں ہے تو یہ سب سے بڑا جھوٹ ہو گا اور آپ اس کی بات کا بالکل اعتبار مت کریں، مگر اس وباءکے باعث سب کچھ ٹھپ کر دینا بھی درست نہ تھا۔ اگر ہم اعدادوشمار کو دوسرے زاوئیے سے دیکھیں تو برطانیہ کی کل آبادی 6کروڑ 60لاکھ کی آبادی میں 41ہزار اموات ہوئیں چنانچہ کل آبادی کے لحاظ سے یہ شرح محض0.1فیصد بنتی ہے۔ 

ٹم ہرفورڈ لکھتے ہیں کہ ”اس شرح کو ذہن میں رکھتے ہوئے اگر ہم مثبت سوچیں تو ہم میں سے 99.99فیصد لوگ اس وباءسے محفوظ رہے۔ ہر 1ہزار برطانوی شہریوں میں سے صرف 1کی کورونا وائرس سے موت واقع ہوئی، اس کے باوجود ملکی معیشت کی حالت ایسی ہے جیسے ہارٹ اٹیک کے مریض کی ہوتی ہے۔ حکومتی قرض اربوں پاﺅنڈ بڑھ چکا ہے۔ دفاتر بند ہیں اور والدین بچوں کو سکول بھیجنے سے خوفزدہ ہیں۔ میرے خیال میں کورونا وائرس کی یہ پہلی لہر خطرناک ترین تھی۔ خدانخواستہ اگر دوسری لہر آتی ہے تو وہ اس سے کہیں کم خطرناک ہو گی۔ اس خطرناک ترین لہر میں ہم 99.99فیصد لوگ محفوظ رہے، اس کے باوجود ایسا خوف کیوں ہے۔ جو لوگ اس وباءسے مرے ہیں، ان میں واضح اکثریت 65سال سے زائد عمر کے لوگوں کی تھی اور حقیقت یہ ہے کہ اگر آپ کی عمر 60سال سے کم ہے تو آپ کی کورونا وائرس سے موت ہونے کا خطرہ انتہائی کم ہے۔ اگر آپ کوپہلے سے کوئی بیماری لاحق ہے تو آپ کو زیادہ احتیاط برتنی چاہیے لیکن اس وباءکے خوف کی وجہ سے جس طرح دنیا بند ہو کر رہ گئی ہے، ہمیں مذکورہ اعدادوشمار کو مدنظر رکھتے ہوئے اس پر غور کرنا چاہیے۔“

مزید :

کورونا وائرس -