اقتصادی ترقی کےلئےپاکستان اور افغانستان کے درمیان تجارت کو بڑھانا ناگزیر ہے:اسد قیصر 

 اقتصادی ترقی کےلئےپاکستان اور افغانستان کے درمیان تجارت کو بڑھانا ناگزیر ...
 اقتصادی ترقی کےلئےپاکستان اور افغانستان کے درمیان تجارت کو بڑھانا ناگزیر ہے:اسد قیصر 

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن)سپیکرقومی اسمبلی اسدقیصرنےکہاہےکہ تجارت کی راہ میں حائل رکاوٹوں کوختم کرنےاورتاجروں کو سہولیات فراہم کرنے سے پاکستان اور افغانستان کے مابین تجارتی حجم میں اضافہ ہوگا جو ملک کے بہترین معاشی مفاد میں ہے،سرحد کے دونوں طرف نان ٹیرف رکاوٹوں میں کمی سے باہمی تجارت میں اضافہ ہوگا،وبائی امراض کی وجہ سے متاثر ہونے والی پاکستانی برآمدات کی بحالی کےلیے خصوصی اقدامات اٹھائے جا رہے ہیں۔

پارلیمنٹ ہاؤس میں پاک افغان دوستی گروپ کی ایگزیکٹو کمیٹی کے دوسرے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئےسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر نے کہا  کہ پاک افغان پارلیمانی دوستی گروپ کی ایگزیکٹو کمیٹی کی تجاویز  کو بروقت عمل میں لانے سے دونوں ممالک میں تعلقات میں مزید بہتری آئے گی۔  انہوں نےسٹیٹ بینک،پاکستان کسٹمز، نیشنل لاجسٹک سیل،خیبر پختونخوااور بلوچستان کی صوبائی حکومتوں کے نمائندوں کو ہدایت کی کہ وہ ایگزیکٹو کمیٹی کی سفارشات کو اپنی طے شدہ  کے اندر نافذ کریں۔ انہوں نےکہاکہ یہ بات کمیٹی کے نوٹس میں لائی گئی تھی کہ غلام خان بارڈر پر افغانستان کی ٹرانزٹ تجارت کے تاجروں کو بینک کی عدم موجودگی، چمن جاتے ہوئے چوکیوں پر غیرضروری جانچ پڑتال، طورخم بارڈر پر کنٹینرز کا وزن،کراچی بندرگاہ پرغیرمعقول ڈموریج چارجز عائد کئے جانے کی وجہ سے انھیں کافی پریشانی کا سامنا کرنا پڑا رہا ہے۔

سپیکرنےکہاکہ اراکین پارلیمنٹ اور ادارہ جاتی سٹیک ہولڈرز کی جانب سےآئندہ جامع تجارتی معاہدےفائدہ مند ثابت ہوگا،افغان سپیکر کو اس بات کا یقین ہے کہ پارلیمنٹ پاکستان اور افغانستان کے درمیان عوامی روابط کے علاوہ باہمی اقتصادی اور تجارتی تعلقات کو بڑھانے میں بھی اہم کردار ادا کرسکتی ہیں۔  

مزید :

علاقائی -اسلام آباد -