فاطمہ قتل کیس،مرکزی ملزم پیر اسد شاہ کی چالاکیاں،اہم مواد ضائع ہونے کا خدشہ

فاطمہ قتل کیس،مرکزی ملزم پیر اسد شاہ کی چالاکیاں،اہم مواد ضائع ہونے کا خدشہ
فاطمہ قتل کیس،مرکزی ملزم پیر اسد شاہ کی چالاکیاں،اہم مواد ضائع ہونے کا خدشہ

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

خیرپور (ڈیلی پاکستان آن لائن) رانی پور میں پیر کی حویلی میں مبینہ تشدد سے جاں بحق فاطمہ کے مرکزی ملزم اسد شاہ  نے پولیس کو غلط پاسورڈ بتایا جس کی وجہ سے اس کا موبائل مکمل لاک ہوگیا۔پولیس نے مرکزی ملزم اسد شاہ کو کراچی سے خیرپور منتقل کر دیا، ملزم کو دوبارہ ڈی این اے ٹیسٹ کیلئے کراچی لے جایا گیا تھا۔

جیو نیوز کا پولیس ذرائع کے حوالے سے کہنا ہے کہ اسد شاہ کے فون کا پن کوڈ بھی پولیس حاصل نہیں کر سکی، پولیس کو ملزم نے ہر بار غلط کوڈ بتایا، بار بار غلط پن کوڈ لگانے سے ملزم کا فون مکمل لاک ہوچکا ہے۔

مقدمے میں نامزد ملزمان حنا شاہ (مرکزی ملزم پیر اسد شاہ کی بیوی)اور اس کے والد تاحال گرفتار نہیں ہو سکے، مقدمے میں گرفتار اسد شاہ اور ملزم امتیاز 7 روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کی تحویل میں ہیں۔

یادرہے کہ 14 اگست کو رانی پور کی حویلی میں 10 سالہ ملازمہ بچی کی مبینہ تشدد سے ہلاکت ہوئی تھی۔ ڈیلی پاکستان پر خبر لگنے کے بعد مرکزی ملزم اسد شاہ کو گرفتار کیاگیا تھا جبکہ بچی کی موت سے قبل اس کی تڑپنے کی ویڈیو بھی سامنے آئی تھی۔

بچی کی ماں نے ابتدائی بیان دیا تھا کہ بچی کی موت طبعی ہے۔ پولیس نے اسی بیان پر اکتفا کر کے نہ بچی کا میڈیکل کروایا نہ پوسٹ مارٹم ، الٹا اس کو تدفین کےلیے والدین کے حوالے کردیا۔