تھر سے کوئلہ نکالنے کیلئے مشینری کی درآمد ڈیوٹی فری قرار

تھر سے کوئلہ نکالنے کیلئے مشینری کی درآمد ڈیوٹی فری قرار
تھر سے کوئلہ نکالنے کیلئے مشینری کی درآمد ڈیوٹی فری قرار

  

اسلام آباد (ویب ڈیسک)وفاق نے سندھ حکومت کا مطالبہ پورا کرتے ہوئے تھر سے کوئلہ نکالنے کیلئے پاکستان میں سرمایہ کاری کرنے والی غیر ملکی کمپنیوں کیلئے تمام پلانٹس، مشینری و آلات اور مخصوص گاڑیوں کی درآمد کو کسٹمز ڈیوٹی سے مستثنیٰ قرار دے دیا ہے ،تھر کے کوئلہ کے ذخائر 26 سال قبل دریافت ہونے کے باوجود بجلی کی پیداوار کیلئے استعمال میں لائے جانے کے قابل نہیں ہوسکے جس کی بڑی وجہ کوئلہ کی کانوں میں سرمایہ کاری کیلئے آنے والی کمپنیوں کو ٹیکس و ڈیوٹی کی مراعات اور بنیادی انفراسٹرکچرکی عدم دستیابی تھی، ایف بی آر نے پلانٹ، مشینری اور آلات کی درآمد اور مخصوص پتھریلی زمین پر چلائی جانے والی گاڑیوں کی درآمد پر کسٹمز ڈیوٹی کی مکمل چھوٹ کو کچھ شرائط سے منسلک کر دیا ہے اس ضمن میں ایف بی آر نے قرار دیا ہے کہ یہ چھوٹ ان کمپنیوں کو دستیاب ہوگی جن کے پاس تھر کے ذخائرکے کسی بلاک کی لیز ہوگی ،جو کمپنیاں یہ پلانٹ، مشینری،آلات اورگاڑیاں درآمد کریں گی وہ ایف بی آر کی اجازت کے بغیر ان کو کسی مقامی کمپنی یا فرد کو فروخت نہیں کر سکیں گی اور اگر کوئی کمپنی ایسی فروخت میں ملوث پائی گئی تو اس سے وہ تمام ٹیکس و ڈیوٹیاں جو ان اشیا کی کمرشل درآمد کے وقت رائج ہونگی وصول کی جائیں گی تاہم ایف بی آر نے وضاحت کی ہے کہ پلانٹس، مشینری ، آلات اور مخصوص پتھریلی زمین پر چلائی جانے والی گاڑ یوں کو ایف بی آر کے علم میں لائے جانے کے بعد تھر میں کام کرنے والی کانکنی کی دیگر کمپنیوں کے حوالے کیا جاسکے گا ،تھر میں کام کرنے والی کمپنیوں کے سربراہان یا ان کے مجاز نمائندے ایف بی آر کو ایک حلف پر مبنی تحریر فراہم کریں گے کہ جو اشیا ء وہ درآمد کر رہے ہیں وہ ان کے کانکنی کے منصوبے کیلئے انتہائی اہم ہیں۔ ایف بی آر کی جانب سے ڈیوٹی مراعات دیئے جانے کے بعد اب تھر کے کوئلے کے ذخائر کو ترقی د یئے جانے کے امکانات بڑھ جائیں گے۔

مزید : بزنس