کمانڈ اینڈ سٹاف کالج کوئٹہ کے وفدکاواپڈا ہاؤس کا دورہ

کمانڈ اینڈ سٹاف کالج کوئٹہ کے وفدکاواپڈا ہاؤس کا دورہ

لاہور(کامرس رپورٹر) کمانڈ اینڈ سٹاف کالج کوئٹہ کے وفد نے واپڈا ہاؤس کا دورہ کیا اور پانی و بجلی کے شعبوں بارے بریفنگ میں شرکت کی ۔ وفد کی قیادت سینئر انسٹرکٹر کرنل حسین نے کی۔ممبر (پاور) واپڈا بدرالمنیر مرتضیٰ اور واپڈا اور پیپکو کے سینئر افسران بھی اس موقع پر موجود تھے ۔ ایڈیشنل چیف انجینئر (ڈیمز) واپڈا شاہد حمید نے وفد کو پانی و پن بجلی کے شعبوں کے حوالے سے جامع بریفنگ دی ۔اُنہوں نے زور دیا کہ ملک میں پانی اور بجلی کی موجودہ صورتحال کے پیشِ نظر پانی اور پن بجلی کے نئے منصوبوں کی تعمیر نہایت ضروری ہے ، تاکہ پانی اور بجلی کی بڑھتی ہوئی ضروریات کو پورا کیا جاسکے ۔ انہوں نے مزید بتایا کہ سیڈی مینٹیشن کی وجہ سے آبی ذخائر کی پانی ذخیرہ کرنے کی صلاحیت میں کمی اور آبادی میں اضافے کی وجہ سے پانی کی فی کس دستیابی میں کمی واقع ہوئی ہے ۔بریفنگ کے دوران اُنہوں نے وفد کو بتایا کہ پاکستان میں دریائی پانی کو ذخیرہ کرنے کی صلاحیت صرف 10 فیصد ہے جبکہ بین الاقوامی سطح پر یہ شرح40فیصد ہے۔انہوں نے کہا کہ ملک میں پانی اور پن بجلی کے وسائل سے بھر پور طور پر استفادہ کرنے کے لئے واپڈا ایک جامع حکمتِ عملی پر کام کررہا ہے ۔اُنہوں نے کہا کہIndus Cascade پاکستان کا قیمتی اثاثہ ہے جس سے پانی ذخیرہ کرنے اور سستی پن بجلی کی پیدا وار میں مدد ملے گی ۔اُنہوں نے مزید کہا کہ نئے آبی ذخائر کی تعمیر سے مزید 20 ملین ایکڑ اراضی کو زیر کاشت لایا جاسکتا ہے ۔وفد کو بریفنگ کے دوران بتایا گیا کہ 2017 ء کے اواخر سے 2018 ء کے وسط تک واپڈاکے تین زیرتعمیر منصوبے مکمل ہوجائیں گے اور اس دوران 2 ہزار 485 میگاواٹ پن بجلی قومی نظام میں شامل ہوگی ۔مذکورہ منصوبوں میں 969 میگاواٹ کا نیلم جہلم، ایک ہزار 410 میگاواٹ کا تربیلا چوتھا توسیعی منصوبہ اور 106 میگاواٹ کا گولن گول شامل ہیں ۔ وفد کو ماحولیاتی تبدیلیوں کے آبی وسائل پر اثرات، پانی کے شعبہ کو درپیش چیلنجز اور پن بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت کے بارے میں بھی آگاہ کیا گیا۔

بجلی کے شعبہ کے بارے میں بریفنگ کے دوران جنرل منیجر (ریونیو اینڈ کمرشل آپریشن) پیپکو محمد سلیم نے وفد کو بجلی کے شعبہ میں متعارف کرائی جانے والی اصلاحات، بجلی کی لوڈشیڈنگ، انرجی مکس، ڈسٹری بیوشن اور ٹرانسمیشن لاسز، بلنگ، ریکوری اور بجلی کے واجبات کے بارے میں تفصیلاً آگاہ کیا۔ وفد کو بجلی کے شعبہ میں بہتری لانے اور لوڈشیڈنگ ختم کرنے سے متعلق حکومتی اقدامات کے بارے میں بھی بتایا گیا۔بریفنگ کے اختتام پر سوال وجواب کا سیشن ہوا، بعد ازاں ممبر (پاور) واپڈا اور وفد کے سربراہ نے اپنے اپنے اداروں کی جانب سے سووینئر ز کا تبادلہ کیا۔

مزید : کامرس


loading...